ملکی سیاستدانوں کا بھارت کا بے جا احترام کشمیر کے حل میں رکاوٹ ہے ، سردار عتیق خاں

ملکی سیاستدانوں کا بھارت کا بے جا احترام کشمیر کے حل میں رکاوٹ ہے ، سردار ...

  

 لاہور(جاوید اقبال،محمد نواز سنگرا)سابق وزیر اعظم آزاد کشمیر سردار عتیق خاں نے کہا ہے کہ آزاد کشمیر میں اگر شفاف انتخابات ہوئے تو مسلم کانفرنس ہی میدان مارے گی لیکن صاف اور شفاف انتخابات کے امکانات کم ہیں کیونکہ الیکشن میں صرف 4ماہ باقی ہیں اور ابھی تک چیف الیکشن کمشنر کی تقرری نہیں کی گئی ،انتخابات فوج کی نگرانی میں ہونے چاہیں۔کشمیر صرف پاکستان اور بھارت کا نہیں پوری دنیا کا مسئلہ ہے جس کو حل ہونا چاہیے ۔کشمیر بنے گا پاکستان کے نظریے کو آگے بڑھانے کی ضرورت ہے ۔پاکستانی سیاستدانو ں کے سر پر بھارت کے بے جا احترام کا شو ق ہے جو مسئلہ کشمیر کے حل میں بڑی رکاوٹ ہے۔پاکستانی سیاستدانوں نے آزاد کشمیرکو سیاسی جماعتوں میں تقسیم کر دیا ہے جو قائد اعظم کی سیاسی پالیسیوں کے خلاف ہے۔پرویز مشرف نے مسئلہ کشمیر کو بہتر انداز میں آگے بڑھایا جن کی دوستی پر فخر ہے۔ان خیالات کا اظہار سردار عتیق خان نے پاکستان فورم میں اظہار خیال کرتے ہوئے کیا۔قبل ازیں انہوں روز نامہ پاکستان کے چیف ایڈیٹر مجیب الرحمٰن شامی اور ایڈیٹر عمر شامی سے ملاقات کی ۔بعد ازاں فورم میں اظہار خیال کرتے سردار عتیق خاں نے کہا کہ یوم یکجہتی کشمیر سے کشمیریوں کی تحریک کو تقویت ملتی ہے جس کو پوری دنیا میں منایا جانا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ او آئی سی اور اقوام متحدہ کی قرادادیں واضح کرتی ہیں کہ مسئلہ کشمیر صرف پاکستان اور بھارت کا نہیں بلکہ پوری دنیا کا ہے ۔اقوام متحدہ کی قرار دادیں روڈ میپ دیتی ہیں ،کشمیریوں کو شامل کر کے مسئلہ کشمیر کا حل نکالنا چاہیے۔سردار عتیق خاں نے کہا کہ پاکستان کی ہر حکومت نے مسئلہ کشمیر کے حل کی کوشش کی لیکن نئی حکومت کو ایک نئے جال میں پھنسا دیا جاتا ہے ،مسئلہ کشمیر کے حل کیلئے سب سے مضبوط مؤقف فوجی حکمرانوں نے دیا۔انہوں نے کہا کہ بھارتی وزراء بھی کہتے ہیں کہ پرویز مشرف زبردستی مسئلہ کشمیر حل کروانا چاہتے ہیں اور مجھے ان کی دوستی پر فخر ہے۔ موجودہ حکومت کی مسئلہ کشمیر کے حوالے سے کاوشوں کے حوالے سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ نواز شریف گزشتہ ادوار میں مسئلہ کشمیر کو پاکستان کے نقطۂ نظر سے دیکھتے رہے لیکن اب (ن)لیگ کے نقطہ نظر سے دیکھتے ہیں۔سابق وزیر اعظم نے موجودہ آزاد کشمیر کی حکومت پر بات کرتے ہوئے کہا کہ یہ میثاق جمہوریت کے تحت قائم کی گئی ،مسلم لیگ(ن)نے مسلم کانفرنس کا راستہ روک کر پیپلز پارٹی کا ساتھ دیا تھا۔اگر اس دفعہ شفاف الیکشن ہو ا تو ہماری جیت یقینی ہے ،حکومت بنانے میں مسلم لیگ کے ساتھ اتحاد ہو سکتا ہے۔ملکی صورتحال پر سردار عتیق نے کہا کہ کراچی کے بعد اندرون سند ھ اور پنجاب میں بھی آپریشن ہو نا چاہیے۔انہوں نے کہا کہ آصف علی زرداری نے قربانی کا سفر شروع کیا ہے جس کیلئے آزاد کشمیر والوں کو بھی گردن کٹوانی پڑ سکتی ہے۔سابق وزیر اعظم آزاد کشمیر نے بتایا کہ آزاد کشمیر 17ہزار اور گلگت بلتستان سے23ہزار میگا واٹ بجلی پیدا کی جاسکتی ہے جس سے پاکستان میں لوڈشیڈنگ کا مکمل خاتمہ ہو سکتا ہے ۔ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ تاریخ گواہ ہے کہ فوج کی زیر نگرانی کرائے جانیوالے انتخابات زیادہ کامیاب تھے اور آئندہ بھی فوج شفاف انتخابات میں اہم کردار ادار کر سکتی ہے ،آزاد کشمیر میں چیف الیکشن کمیشن کی عدم تقرری،نادرا کی فہرستیں اور دیگر اہم امور پر کام نہ ہونا الیکشن پر ایک سوالیہ نشان ہے۔ایک سوال کے جواب میں سردار عتیق خاں نے کہا کہ آزاد کشمیر پاکستان کی دفاعی لائن پر ہے اور گزشتہ سال میں اس میں ایسے حالات سامنے آئے ہیں کہ یہاں بھی سندھ کی طرز پر رینجرز اور فوج کی ضرورت ہے۔انہوں کہا کہ نیلم جہلم اور ہانگ سکیپ مسلم کانفرنس کے بے بی ہیں جب میں وزیر اعظم تھا تو نیلم جہلم پراجیکٹ پر سنگ بنیا درکھا مگر حکومت آج 84میگا واٹ بجلی پیدا کرنے کی بات کر رہی ہے میرے دور میں یہاں 90میگا واٹ بجلی پیدا کی۔

مزید :

علاقائی -