فلم کے دوران مندر میں کنڈوم کی تشہیر، فوجیوں کی بیویوں کی تضحیک، سنی لیون بڑی مصیبت میں پھنس گئیں

فلم کے دوران مندر میں کنڈوم کی تشہیر، فوجیوں کی بیویوں کی تضحیک، سنی لیون بڑی ...
فلم کے دوران مندر میں کنڈوم کی تشہیر، فوجیوں کی بیویوں کی تضحیک، سنی لیون بڑی مصیبت میں پھنس گئیں

  

ممبئی (مانیٹرنگ ڈیسک) ایسا لگتا ہے کہ تنازعات اور سنی لیون کا چولی دامن کا ساتھ ہے کیونکہ آئے روز وہ کسی نہ کسی تنازع سے دوچار ہو جاتی ہیں۔ حال ہی میں سنی لیون نے ایک معروف صحافی بھوپندرا چوبے کے ساتھ انٹرویو کیا تھا جس میں ان سے انتہائی سخت اور بے باک سوالات پوچھے گئے تاہم اس انٹرویو کے بعد پوری بھارتی فلم انڈسٹری ان کے دفاع میں میدان میں آ گئی اور بالخصوص عامر خان نے بھی سوشل میڈیا پر واضح کر دیا کہ مستقبل میں انہیں سنی لیون کے ساتھ کسی فلم میں کام کرنے سے کوئی مسئلہ نہیں ہے۔

ابھی اس تنازعہ کو ختم ہوئے چند دن ہی ہوئے ہیں کہ ایک اور تنازع نے سنی لیون کو آن گھیرا ہے کیونکہ فلم ”مستی زادے“ میں ایک فحش سین فلمانے پر ان کے خلاف مقدمہ درج کر لیا گیا ہے جبکہ اسی فلم کے کچھ مناظر کے خلاف بھارتی فوجی نے بھی درخواست دیدی ہے۔

بھارتی میڈیا کے مطابق نئی دلی کے ادرش نگر پولیس سٹیشن میں سنی لیون، ان کے ساتھی اداکار ویر داس سمیت مستی زادے فلم کی تمام کاسٹ اور عملے کے خلاف ایک درخواست پر مقدمہ درج کیا گیا ہے۔ رپورٹ کے مطابق درخواست میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ سنی لیون اور ان کے ساتھی اداکاروں نے فلم کے ایک سین کے دوران مندر میں ”کنڈوم“ کی انتہائی فحش طریقے سے تشہیر کی ہے۔

ایک اور بھارتی خبر رساں ادارے نے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ سنی لیون اور مستی زادے فلم کی پوری کاسٹ کے خلاف ایک فوجی نے بھی درخواست دی ہے جس میں کہا گیا ہے کہ فلم کے کچھ مناظر میں ڈیوٹی پر موجود فوجیوں کی بیویوں اور ماﺅں کے وقار کو مجروح کرتے ہوئے ان کی تضحیک کی گئی ہے۔ درخواست میں مزید کہا گیا ہے کہ اس فلم میں فوجیوں اور ان کے گھر کی خواتین کے بنیادی حقوق کی خلاف ورزی کی گئی جس سے بھارتی فوج اور ان کے خاندان والوں کے جذبات شدید مجروح ہوئے ہیں۔ درخواست میں مزید کہا گیا ہے کہ اس فلم پر سینما گھروں کیساتھ ساتھ انٹرنیٹ پر بھی پابندی عائد کی جائے۔

مزید :

تفریح -