سعودی جیلوں میں قید غیر ملکیوں کو جس خوشخبری کا انتظار تھا وہ آگئی، بالآخر سعودی شوریٰ نے اعلان کردیا

سعودی جیلوں میں قید غیر ملکیوں کو جس خوشخبری کا انتظار تھا وہ آگئی، بالآخر ...
سعودی جیلوں میں قید غیر ملکیوں کو جس خوشخبری کا انتظار تھا وہ آگئی، بالآخر سعودی شوریٰ نے اعلان کردیا

  

ریاض (مانیٹرنگ ڈیسک) یوں تو قید کسی بھی جگہ ہو قید ہی ہوتی ہے، لیکن دیار غیر میں قید کی زندگی گزارنے والوں کا دکھ بہت گہرا ہوتا ہے۔ سعودی شوریٰ کونسل نے ان غیر ملکی قیدیوں کے متعلق ایک اہم فیصلہ کرکے ان کے لئے امید کی نئی کرن پیدا کر دی ہے۔ شورٰی کونسل نے غیر ملکی قیدیوں پر اٹھنے والے اخراجات کے پیش نظر انہیں ملک بدرکرنے کا مطالبہ کردیا ہے۔

مزید پڑھیں: منشیات کا کاروبار کرنے والا پاکستانی شہری جسے برطانوی حکومت چاہتے ہوئے بھی پاکستان واپس نہیں بھیج پارہی کیونکہ۔۔۔

کونسل کا کہنا ہے کہ غیرملکی قیدیوں کو ان کے ممالک کے حوالے کرنے سے حکومت ایک ارب ریال سے زائد کی بچت کرسکتی ہے۔ شوریٰ کے رکن شہزادہ خالد السعود کا کہنا تھا کہ اس وقت جیلوں میں تقریباً 31 ہزار غیر ملکی قیدی ہیں اور ان میں سے ہر ایک پر 4ہزار ریال ماہانہ خرچ ہورہے ہیں، لہٰذا ان قیدیوں کو ان کے ممالک کے حوالے کر کے بھاری رقم کی بچت کی جا سکتی ہے۔

مزید :

بین الاقوامی -