سپریم کورٹ کا ملزم عمر فاروق کی اڑھائی سال سے عدم گرفتاری کا نوٹس

سپریم کورٹ کا ملزم عمر فاروق کی اڑھائی سال سے عدم گرفتاری کا نوٹس

لاہور(نامہ نگار خصوصی )سپریم کورٹ نے یونیورسٹی کی خاتون ٹیچر پر تیزاب پھینکنے والے اشتہاری ملزم عمر فاروق کی اڑھائی سال سے عدم گرفتاری کا نوٹس لیتے ہوئے سی سی پی او لاہور امین وینس کو آج10فروری کو وضاحت کے لئے طلب کر لیا ہے۔سپریم کورٹ لاہوررجسٹری میں جسٹس منظور احمد ملک کی سربراہی میں دو رکنی بنچ نے ملزم عمر فاروق کی عدم گرفتاری کا نوٹس مقدمے کے شریک ملزم عبدالحق کی سزا سے بریت کی اپیل میں سماعت کے دوران لیا ہے، عدالتی کارروائی شروع ہوئی تو سپریم کورٹ کے استفسار کے جواب میں پراسیکوشن کے وکیل نے آگاہ کیا کہ تھانہ ستوکتلہ کے علاقے کی رہائشی یونیورسٹی ٹیچر ہما شاہد پر تیزاب پھینکنے کے مقدمے میں شریک ملزم عبدالحق کو جون 2014ء میں انسداد دہشت گردی نے 14سال قید اور جرمانے کی سزا سنائی تھی اور مرکزی ملزم عمر فاروق کو اشتہاری قرار دیا تھا، ریکارڈ کے مطابق ملزم عمر فاروق آج تک گرفتار نہیں ہو سکا جس پر دو رکنی بنچ نے نوٹس لیتے ہوئے سی سی پی او لاہور امین وینس کو آج 10فروری پیش ہونے کا حکم دیا ہے اور وضاحت طلب کی ہے کہ اڑھائی برس گزرنے کے باوجود مرکزی ملزم گرفتار کیوں نہیں ہو سکا۔

مزید : علاقائی