نجی ہاؤسنگ سوسائٹیوں کیلئے لینڈ ایکوزیشن ایکٹ استعمال نہیں کیا جا سکتا :لاہور ہائیکورٹ

نجی ہاؤسنگ سوسائٹیوں کیلئے لینڈ ایکوزیشن ایکٹ استعمال نہیں کیا جا سکتا ...

لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہورہائیکورٹ نے نجی ہاؤسنگ سوسائٹیوں کے لئے لینڈ ایکوزیشن ایکٹ کا استعمال غیرآئینی قرار دیتے ہوئے ریمارکس دیئے کہ عوامی مقصد کے لئے جگہ ایکوائر کرنا صرف حکومت کا آئینی حق ہے۔ جسٹس چودھری محمد اقبال نے یہ حکم 21 صفحات پر مشتمل جاری کردہ تفصیلی فیصلہ میں دیا ہے۔ یہ درخواست ایڈن ہاؤسنگ سوسائٹی کی جانب سے شہریوں کی اراضی قبضے میں لینے کے خلاف دائر کی گئی تھی۔ درخواست گزاروں کا موقف تھا کہ ایڈن ہاؤسنگ سوسائٹی کے لئے موضع ملک پور سجپال میں 393 کنال اراضی ایکوائر کی جانا تھی، حالانکہ نجی ہاؤسنگ سوسائٹیوں کے لئے لینڈ ایکوزیشن ایکٹ استعمال نہیں کیا جا سکتا، عدالت نے اپنے فیصلے میں قرار دیا کہ عوامی مقصد کے لئے جگہ ایکوائر کرنا صرف حکومت کا آئینی حق ہے،نجی سکیمیں عوامی مقصد کے لئے نہیں بلکہ ذاتی مقصد کے لئے جگہ چاہتی ہیں۔ جبکہ آئین پاکستان عوام کی جائیداد کے حق کو مکمل تحفظ فراہم کرتا ہے،عدالت نے مزید قرار دیا کہ نجی ہاؤسنگ سوسائٹیوں کے لئے لینڈ ایکوزیشن ایکٹ استعمال نہیں کیا جا سکتا اور نہ ہی نجی ہاؤسنگ سوسائٹیوں کے لئے عوام کی جائیداد کا آئینی حق غصب نہیں کیا جا سکتا، عدالت نے اپنے فیصلے میں ایڈن ہاؤسنگ سوسائٹی کے لئے ایکوزیشن ایکٹ کی دفعہ4 کے تحت جاری نوٹیفکیشن بھی کالعدم قرار دیتے ہوئے درخواست منظور کر لی ہے ۔

مزید : علاقائی