چوک سرور شہید کو تحصیل کا درجہ نہ ملنے پر شہر بھر میں شٹر ڈاؤن

چوک سرور شہید کو تحصیل کا درجہ نہ ملنے پر شہر بھر میں شٹر ڈاؤن

چوک سرورشہید(نامہ نگار، سپیشل رپورٹر) چوک سرورشہید کو تحصیل کادرجہ نہ ملنے پرچوک سرورشہید کے وکلاء نے ایک بھرپور احتجاجی ریلی نکالی۔جس میں چوک سرورشہید کی تمام تاجر تنظیموں نے شٹر ڈاؤن کرکے مکمل طورپر شرکت کی، ریلی کینال ریسٹ ہاؤس سے شروع ہوئی۔ جس کی قیادت وکلاء (بقیہ نمبر20صفحہ12پر )

جن کی تعداد 50 کے قریب تھی نے کی۔ اور ہزاروں کی تعداد میں شہری اس میں شریک ہوئے۔جنہوں نے بینرز، پلے کارڈ، اٹھا رکھے تھے۔ جن پر ایک ہی مطالبہ تھا کہ چوک سرورشہیدکو تحصیل کادرجہ دیا جائے۔ریلی چاروں سڑکوں سے ہوتی ہوئی مرکزی چوک پر پہنچی، جہان پر وکلاء رہنماؤں ملک محمد ایوب مغل، ملک ارشد گدارہ، ریاض الحق چانڈیہ، رمضان کلاچی،چوہدری افتخار، اور دیگرنے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ چوک سرورشہید کو تحصیل کا درجہ دینے کا مطالبہ 1985 سے دہرارہے ہیں۔ سابق وزیر اعلی حیدر وائیں ، پرویز الٰہی اور موجودوزیراعلیٰ شہبازشریف، اور موجودہ وزیر اعظم میاں محمد نوازشریف نے اپنے دوروں کے دوران چوک سرورشہید کو تحصیل کادرجہ دینے کا وعدہ کیا۔ بلکہ اب تو بلدیاتی الیکشن سے قبل وزیر اعلیٰ سیکریٹریٹ نے چوک سرور شہید کو پانچویں تحصیل بنانے کا اعلان بھی کیا لیکن آج تک چوک سرورشہید کو تحصیل کادرجہ دینے کا وعدہ پورا نہ کیا جاسکا ۔مظاہرین نے کہا کہ وہ لاہور میں وزیر اعلیٰ ہاؤ س کے سامنے بھی احتجاجی مظاہرہ کریں گے۔اس احتجاجی ریلی میں انجمن تاجران کی مختلف تنظیموں کے رہنماؤں الرابعہ ٹرسٹ کے ڈاکٹر ظفراقبال رانجھا، سابق ناظم حاجی عبدالستار چوہدر ی ، چئیرمین رانا اورنگ زیب اشرف،چوہدری منظور احمد، چوہدری طارق ظہور، چوہدری عبدالرزاق،حاجی محمد رمضان، لیاقت علی چوہدری،ملک عرفان صدیقی، جماعت اسلامی کے مولانا اسماعیل ، اختر علی گورایا، چوہدری عبدالمجید، چوہدری عبدالوحید، اور دیگر بھی شامل تھے۔ دوگھنٹے تک پورا شہر شٹر ڈاؤن کرکے ریلی میں شامل ہوا۔ چوک سرورشہید کی تاریخ کا یہ سب سے بڑا احتجاج تھا۔

مزید : ملتان صفحہ آخر