جماعت اسلامی نے فاٹا اصلاحات میں تاخیر کاذمہ دار وفاقی حکومت کو قراردیدیا،دھرنے کا اعلان

جماعت اسلامی نے فاٹا اصلاحات میں تاخیر کاذمہ دار وفاقی حکومت کو ...
جماعت اسلامی نے فاٹا اصلاحات میں تاخیر کاذمہ دار وفاقی حکومت کو قراردیدیا،دھرنے کا اعلان

  


پشاور(آئی این پی )امیر جماعت اسلامی خیبرپختونخوا مشتاق احمد خان نے فاٹا اصلاحات کاوفاقی کابینہ ایجنڈے سے اخراج اور فاٹا اصلاحات میں تاخیر کے ذمہ دار وفاقی حکومت اور وزیر اعظم کو قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ وزیر اعظم نے ایجنڈے سے ہٹا کر فاٹا کے عوام کو مایوس کیا ہے۔فاٹا کو خیبرپختونخوا میں ضم کیا جائے اور اصلاحات پر عمل درآمد کو یقینی بنایا جائے۔ اگر فوری طور پر اس پرعملدرآمد نہ کیا گیا تو 16 فروری کو پورے فاٹا میں یوم سیاہ منایا جائے گا اور 26،27،28 فروری کوگورنر ہاﺅ س کے سامنے دھرنا دیں گے ۔

پی ایس ایل میچز انٹرنیٹ پر دیکھنے کے خواہشمندوں کو کوئٹہ گلیڈی ایٹرزاور ٹیپ میڈ ٹی وی نے انتہائی شاندار خوشخبری سنا دی ،بہترین سروس متعارف کروا دی

12 مارچ کوآل پارٹیز دھرنا کی مکمل حمایت کرتے ہیں اور اس میں بھرپور شرکت کریں گے جب کہ مارچ کے آخر میں فاٹا سے اسلام آبادتک لانگ مارچ کریں گے جس میں لاکھوں قبائیلی عوام شریک ہوں گے۔فاٹا اس وقت امتحان اور آزمائش سے دوچار ہے جبکہ ایف سی آر ظلم کا قانون اور خوفناک دستاویزہے جو انسانوں کے ہر طرح کی آزادی کو سلب کرتا ہے ۔ انگریز کے کالے قانون ایف سی آر کی وجہ سے قبائلی علاقہ 27 ہزار مربع کلومیٹر پرمشتمل جیل خانہ ہے جس سے ایک کروڑ قبائلی عوام ظلم کے چکی میں پس رہے ہیں۔ مشتاق احمد خان  پشاور پریس کلب میں قبائیلی عمائدین کے ہمراہ پریس کانفرنس سے خطا ب کر رہے تھے جبکہ اس موقع پر صوبائی نائب امیر و سابق ممبرقومی اسمبلی صاحبزادہ ہارون الرشید ، امیر جماعت اسلامی فاٹا سردار خان، امیر جماعت اسلامی خیبرایجنسی شاہ فیصل ، جنر ل سیکرٹری جماعت اسلامی فاٹا حاجی محمد رفیق آفرید ی ، الخدمت فاﺅنڈیشن فاٹا کے صدر مولانا وحید گل ، امیر جماعت اسلامی ایف آر سرکل حاجی محمد رسول آفریدی اور دیگر قائدین بھی موجو دتھے ۔

مشتاق احمد خان نے کہاکہ حکمرانوں نے فاٹا کو پتھر کے زمانے کا خطہ بنایا ہے جس میں کوئی میڈیکل کالج ، یونیورسٹی نہیں ہے ، فاٹا کے عوام اعلیٰ عدالتوں تک رسائی نہیں رکھتے اورایف سی آر کی وجہ سے قومی اسمبلی اور سینٹ میں فاٹا کے لیے قانون سازی نہیں ہوسکتی ۔مرکزی حکومت فاٹا اصلاحات کو عملی جامہ پہنا کر قبائلی عوام کو ترقی کے امور میں شریک کرے، قبائلی عوام کی مرضی سے فاٹا کوصوبہ خیبرپختونخو ا میں ہی ضم کیا جائے ۔ مشتاق احمد خان نے کہاکہ حکمرانوں کی غلط پالیسیوں کی وجہ سے پاکستان میں سب سے زیادہ غربت فاٹا میں ہے فاٹا کے عوام سڑکوں ، تعلیم، پینے کے صاف پانی اور صحت کی سہولیات سے محروم ہیں ۔انہوں نے کہاکہ جماعت اسلامی کے آل پارٹیز جرگہ کے مطالبہ پر حکومت نے سرتاج عزیز کی سربراہی میں فاٹا اصلاحات کے لیے جرگہ تشکیل دیا تھا جنہوں نے فاٹا اصلاحات کا پیکج دیاجس میں فاٹاکو خیبرپختونخوا میں شامل کرنے کی تجویز بھی شامل تھی ۔

مزید : پشاور