سکولوں میں مستقل سربراہ تعینات کرنے کی بجائے سینئر اساتذہ کو اضافی چارج دیدیا

سکولوں میں مستقل سربراہ تعینات کرنے کی بجائے سینئر اساتذہ کو اضافی چارج ...

  

لاہور(حافظ عمران انور)محکمہ تعلیم کا انوکھا فیصلہ,سکولوں میں مستقل سربراہ تعینات کرنے کی بجائے سینئر اساتذہ کو سکول سربراہ کے اضافی چارج دینے کے احکامات جاری کر دئیے۔ محکمہ تعلیم نے پنجاب بھر میں بغیر سربراہ کے چلنے والے سکولوں کا نوٹس لیتے ہوئے پنجاب کے تمام اضلاع کے سی ای اوز ایجوکیشن کو 15 فروری تک تمام سکولوں میں لازمی سربراہ مقرر کرنے کی ہدایات جاری کر دی ہیں ۔اس حوالے سے محکمہ تعلیم سکول ایجوکیشن نے تمام اضلاع کے سی ای اوز ایجوکیشن کو پنجاب بھر میں بغیر سربراہ کے چلنے والے سکولوں میں موسٹ سینئر اساتذہ کو پرنسپلز کا اضافی چارج دینے کے حوالے سے مراسلہ جاری کر دیا ہے ۔مراسلے کے مطابق سینئر اساتذہ کو ریگولر پرنسپل کی تعیناتی تک پرنسپل کا اضافی چارج دیا جائے گا لیکن ان سینئر اساتذہ کو اضافی چارج کے ساتھ کوئی الاونس نہیں دیا جائے گا اور وہ محکمہ کی طرف سے دئیے گئے اپنے پہلے سکیل کے مطابق کام کری گے۔محکمہ تعلیم کی طرف سے صوبے کے تمام سی ای اوز کو جاری مراسلے میں یہ بھی ہدایات جاری کی گئی ہیں کہ جن سینئر اساتذہ کو پرنسپلز یا ہیڈ ماسٹرز کا اضافی چارج دیا جائے ان کا تعلق متعلقہ سکول سے ہی ۔مراسلے میں صوبے بھر کے سی ای اوز کو یہ بھی ہدایا ت دی گئی ہیں کہ جن سکولوں میں مستقل سربراہ موجود نہیں ان کی رپورٹ محکمہ کو جلد ارسال کی جائے تا کہ وہاں مستقل سربراہان تعینات کئے جاسکیں ۔ ذرائع کے مطابق پنجاب بھر میں اس وقت 1300سے زائد سکول سربراہوں سے محروم ہیں جس کی وجہ سے ان سکولوں میں انتظامی امور شدید متاثر ہیں ۔دوسری طرف محکمہ تعلیم کے اس اقدام سے اساتذہ کا کہنا ہے کہ حکومت کے اس اقدام سے سینئر اساتذہ پر اضافی بوجھ پڑ جائے گا اور وہ اپنی تدریسی سرگرمیاں محدود کرنے پر مجبور ہوں گے جس کا نقصان طلبہ کو اٹھانا پڑے گا۔

مزید :

علاقائی -