مسلم لیگ (ن) کی متحدہ کے کارکنوں کو پارٹی میں شمولیت کی دعوت

مسلم لیگ (ن) کی متحدہ کے کارکنوں کو پارٹی میں شمولیت کی دعوت

  

کراچی (اسٹاف رپورٹر) پاکستان مسلم لیگ (ن) کراچی ڈویژن کے جنرل سیکرٹری خواجہ طارق نذیر نے ایم کیو ایم کے کارکنوں کو مسلم لیگ (ن) میں شمولیت کی دعوت دیتے ہوئے کہا ہے کہ آپ کے بزرگوں نے جوخواب دیکھا تھا اس کی تعبیر میاں محمد نواز شریف ہیں ۔مسلم لیگ (ن) کے دروازے ہر محب وطن پاکستانی کے لیے کھلے ہوئے ہیں ۔عمران خان کا مسلم لیگ (ن) کو بڑے جلسے کرنے کا چیلنج دیوانے کی بڑ ہے ۔لاہور میں خالی کرسیوں سے خطاب کے بعد چیئرمین پی ٹی آئی ذہنی خلفشار کا شکار ہوگئے ہیں ۔وائس چیئرمین یوسی 2لیبر اسکوائر عبدالرحیم سواتی کی والدہ اور کارکن فضل مہمند کی بیٹی کی وفات پر اظہار تعزیت کے موقع پر میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کیا ۔اس موقع پر ایڈیشنل جنرل سیکرٹری سہیل ندیم ،ڈپٹی انفارمیشن سیکرٹری خواجہ نیر شریف ،سوشل میڈیا ٹیم کے عمران خواجہ اور کونسلر اختر تبسم اور میڈیا کوآرڈی نیٹر عبدالحمید بٹ بھی موجود تھے ۔خواجہ طارق نذیر نے کہا کہ سیاسی جماعتوں کی ٹوٹ پھوٹ کسی طور پر بھی جمہوریت کے لیے سود مند نہیں ہے تاہم اگر خود پارٹی کے رہنما معاملات کو نہیں سنبھال سکیں تو اس کا دوش کارکنوں کو نہیں دیاجاسکتا ہے ۔انہوں نے کہا کہ ایم کیو ایم تقسیم در تقسیم ہوتی جارہی ہے جس کی وجہ سے ان کے کارکن ذہنی کرب کا شکار ہیں ۔میں تمام محب وطن ایم کیو ایم کے کارکنوں کو پیش کش کرتا ہوں کہ وہ مسلم لیگ (ن) میں شمولیت اختیار کریں کیونکہ ان کے بزرگوں نے بھی مسلم لیگ کی قیادت میں قیام پاکستان کی جدوجہد میں ہراول دستے کا کردار ادا کیا تھا ۔آج ان کے بزرگوں کے خوابوں کی تعبیر میاں نواز شریف کی شکل میں موجود ہے ۔خواجہ طارق نذیر نے کہا کہ آصف علی زرداری کی جانب سے کرپشن کے خاتمے اور گڈ گورننس کی باتیں سمجھ سے بالا تر ہیں ۔10سال سے سندھ میں حکمرانی کرنے والی پیپلزپارٹی نے صوبے کو کھنڈر میں تبدیل کردیا ہے ۔آصف علی زرداری کو پہلے سندھ میں توجہ دینی چاہیے اوران کا فرض ہے کہ وہ تھر میں بھوک سے مرتے بچوں کو بچانے کے لیے اقدامات کریں ۔انہوں نے چیئرمین پی ٹی آئی عمران خان کی جانب سے مسلم لیگ (ن)سے بڑے جلسے منعقد کرنے کے اعلان کو دیوانے کی بڑ قرار دیتے ہوئے کہا کہ 17جنوری کو لاہور میں ہونے والے جلسے کی ناکامی نے عمران خان کو ذہنی خلفشار میں مبتلا کردیا ہے ۔لاہور جلسے کی خالی کرسیاں ان کے لیے ڈراؤنا خواب بن گئی ہیں ۔عمران خان کو چاہیے کہ وہ حقیقت کا ادراک رکھتے ہوئے اپنے قد سے بڑی باتیں نہ کریں ۔

مزید :

تجزیہ -کراچی صفحہ اول -