میوہسپتال کا جب سے دورہ کیا ہے تب سے دل پر بوجھ لیکر پھر رہا ہوں، سٹنٹ کی قیمتوں میں کمی کرکے ڈائیلاسز کے شعبے میں اقدامات کروں گا،چیف جسٹس ثاقب نثار

میوہسپتال کا جب سے دورہ کیا ہے تب سے دل پر بوجھ لیکر پھر رہا ہوں، سٹنٹ کی ...
میوہسپتال کا جب سے دورہ کیا ہے تب سے دل پر بوجھ لیکر پھر رہا ہوں، سٹنٹ کی قیمتوں میں کمی کرکے ڈائیلاسز کے شعبے میں اقدامات کروں گا،چیف جسٹس ثاقب نثار

  

لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن)چیف جسٹس ثاقب نثار نے کہا ہے کہ میوہسپتال کاجب سے دورہ کیاہے تب سے دل پربوجھ لے کے پھررہاہوں، معیاری اسٹنٹ کی قیمتوں میں کمی کرکے ڈائیلاسزکے شعبے میں اقدامات کروں گا،انہوں نے کہا کہ طاقت کے مظاہرے کیلئے نہیں،ذمہ داری کیلئے اقدامات کررہے ہیں،عدالت نے سرکاری ہسپتالوں کے ایم ایس سے 24فروری تک رپورٹ طلب کر لی۔

سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں ہسپتالوں کی حالت زارسے متعلق ازخودنوٹس کی سماعت کے دوران چیف جسٹس آف پاکستان نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ تمام سرکاری ہسپتالوں میں اعلیٰ قسم کی ایمرجنسی چاہیے،دودوماہ کے بچوں کی بھی مناسب دیکھ بھال نہیں ہورہی،چیف جسٹس ثاقب نثار نے کہا کہ چلڈرن ہسپتال کاخوددورہ کروں گا،دیکھاجائےگاوہاں بچوں کوسہولیات میسرہیں یانہیں۔

چیف جسٹس آف پاکستان نے کہا کہ ہم سب نے مل کراچھاصحت کانظام تیارکرناہے،یہ سب کی ذمہ داری،فرض ہے کہ مریضوں کی خدمت کریں،چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ بتایاجائے کس کس سرکاری ہسپتال میں بہتری لائی گئی ہے، ایم ایس سروسز ہسپتال نے بتایا کہ ہسپتال میں پہلے 400بیڈتھے اب بڑھاکر 614کردیئے گئے،چیف جسٹس ثاقب نثار نے استفسار کیا کہ لاہورمیں آخری ہسپتال کب اورکہاں بنایاگیا؟چیف جسٹس نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ ڈاکٹراپنے کلینکس پر 4 گھنٹے دیتے ہیں تو 2 گھنٹے کردیں،کوئی جتنی مرضی تنقیدکرے،پرواہ نہیں ہے۔

مزید :

اہم خبریں -قومی -علاقائی -پنجاب -لاہور -