وہ آدمی جس نے کبوتروں کو بھی توہم پرست بنا دیا

وہ آدمی جس نے کبوتروں کو بھی توہم پرست بنا دیا
وہ آدمی جس نے کبوتروں کو بھی توہم پرست بنا دیا

  

لندن (نیوز ڈیسک) دنیا کے مختلف ممالک میں لوگوں نے اپنی مرادیں پوری کرنے کیلئے مختلف قسم کے رسوم و رواج بنا رکھے ہیں۔ کوئی کسی درخت کی پوجا کرتا ہے تو کوئی کسی دریا میں مٹھی بھر چاول پھینکتا ہے۔ اسی طرح کئی ضعیف الاعتقاد لوگ بتوں سے بھی مرادیں مانگتے ہیں۔

امریکی خاتون نے سابق شوہر کی جانب سے 100 ارب روپے کا چیک مسترد کردیا،جاننے کیلئے کلک کریں

مشہور نفسیات دان بی ایف سکینر نے اپنے ایک تجربے سے ثابت کیا کہ جانوروں میں یہ رویہ فطری طور پر پایا جاتا ہے کہ وہ اتفاق سے کوئی اچھی چیز ملنے پر اسے کچھ توہمات کے ساتھ منسلک کر لیتے ہیں اور پھر یہ سمجھتے ہیں کہ ان کے رسوم و رواج کی وجہ سے ان کی مرادیں پوری ہوتی ہیں۔ سکینر نے اس تجربے میں کچھ کبوتروں کو پنجروں میں بند کیا اور پھر انہیں وقفے وقفے سے خوراک دیتا رہا۔ کچھ عرصے میں ہر کبوتر نے خوراک کے حصول کیلئے اپنی ایک مخصوص رسم ایجاد کر لی۔ کچھ کبوتر یہ سمجھنے لگے کہ جب وہ دائروں میں گھومتے ہیں تو انہیں خوراک ملتی ہے لہٰذا وہ خوراک کے حصول کیلئے چکر کاٹنے لگتے۔ کچھ سمجھنے لگے کہ جب وہ پنجرے کے ایک مخصوص حصے پر چونچ مارتے ہیں تو انہیں خوراک ملتی ہے اور کچھ مخصوص رقص کو خوراک ملنے کی وجہ سمجھنے لگے۔ ان کبوتروں کو جب بھی بھوک لگتی تو یہ اپنی اپنی رسم ادا کرنے لگتے۔

سکینر کا کہنا ہے کہ اسی طرح کچھ انسان بھی اپنے مقاصد کے حصول کیلئے بے معنی رسوم اختیار کر لیتے ہیں اور سمجھتے ہیں کہ یہ رسوم ادا کرنے پر ان کے دیوتا خوش ہو کر ان کی مراد پورے کرتے ہیں جبکہ حقیقت میں یہ توہمات کے سوا کچھ بھی نہیں۔

مزید : ڈیلی بائیٹس