حکومت شرح سود میں کم از کم 3فیصدکمی کرے،ارجمند مقصود

حکومت شرح سود میں کم از کم 3فیصدکمی کرے،ارجمند مقصود

لاہور(کامرس رپورٹر) مسلم لیگ (ن) تاجر ونگ کے نائب صدر ارجمند مقصود نے کہا ہے کہ پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں غیر معمولی کمی کی وجہ افراط زر کی شرح کم ہو ئی ہے لہذا افراط زر کی شرح میں واضح کمی کو مد نظر رکھتے ہوئے مارک اپ ریٹ میں کم از کم تین فیصد کمی کی جائے ۔

پاکستانی مصنوعات مارک اپ ریٹ میں کمی کے بغیر عالمی مارکیٹ میں قیمتوں کا مقابلہ نہیں کر سکتیں جس کی وجہ سے ملک کی ایکسپورٹ کم ہو نا شروع ہو گئی ہے انہوں نے کہا کہ پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں کمی کی وجہ سے افراط زر کی شرح واضح طور پر نیچے آئی ہے جس کے پیش نظر سٹیٹ بینک آف پاکستان کو مارک اپ ریٹ میں کمی لانا ہوگی۔ انہوں نے کہا کہ اسکی وجہ سے نہ صرف ملک معاشی و اقتصادی طور پر ترقی کرے گا بلکہ پیداوری لاگت میں کمی سے ملک کی برآمدات میں اضافہ ممکن ہو جائے گا ، جبکہ ملک کی انڈسٹری پہلے ہی بجلی اور گیس کے بحران کی وجہ سے بری طرح متاثر ہے لہذا اس موقع پر یہ فیصلہ ملک کے لئے انتہائی بہتر ہوگا ۔

انہوں نے کہا کہ اگرچہ سٹیٹ بینک آف پاکستان نے گذشتہ مانیٹری پالیسی میں مارک اپ کی شرح نصف فیصد کم کرکے درست سمت میں قدم اٹھایا تھا مگر وہ کافی نہیں، زمینی حقائق کو مدنظر رکھتے ہوئے مارک اپ کی شرح میں کم از کم تین فیصد تک کمی کرنا ضروری ہے۔سٹیٹ بینک آف پاکستان کو اُن ممالک سے سبق سیکھنا چاہیے جہاں مارک اپ کی شرح زیرو فیصد سے ایک فیصد ہونے کے باوجود معیشت ترقی کررہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ سٹیٹ بینک آف پاکستان کو اس حقیقت سے آگاہی ہونی چاہیے پاکستانی مصنوعات تب تک عالمی منڈی میں دوسرے ممالک کا مقابلہ نہیں کرسکتیں جب تک صنعتوں کی پیداواری لاگت میں کمی نہ لائی جائے ،مارک اپ کی شرح میں کمی اس سلسلے میں اہم کردار ادا کرسکتی ہے لیکن مارک اپ میں ایک یا نصف فیصد سے کمی کا کوئی فائدہ نہیں ہو گا۔ انہوں نے حکومت سے اپیل کی کہ ماراپ کی شرح میں3سے4فیصد کمی کی جائے ۔

مزید : میٹروپولیٹن 1