زیادتی کا شکار رقاصہ نے ”معاوضہ“ لے کر ملزموں کو معاف کردیا

زیادتی کا شکار رقاصہ نے ”معاوضہ“ لے کر ملزموں کو معاف کردیا
زیادتی کا شکار رقاصہ نے ”معاوضہ“ لے کر ملزموں کو معاف کردیا

  

اوکاڑہ(ویب ڈیسک) حجرہ شاہ مقیم چار روز قبل گینگ ریپ کا شکار ہونے والی رقاصہ نے 80 ہزار روپے لے کر دو مرکزی ملزمان کو چھوڑ دیا بقیہ ملزمان کے ساتھ پولیس نے مک مکا شروع کردیا۔ زیادتی کا شکار ہونے والی 20 سالہ نشائستہ ملزمان سے بھاری رقم وصول کے بعد منظر عام سے غائب ہوگئی۔

مقامی اخبار کے مطابق چار روز قبل پولیس کانسٹیبل ریاض خاں ولد اسلم پٹھان کی رسم مہندی پر محفل مجرا میں دیپالپور کی رہائشی عالیہ، شہناز، 20 سالہ نشائستہ کو گاﺅں جندران کلاں میں مجرا کرنے کیلئے بک کیا گیا تھا مجرا کرکے واپس آرہی تھیں کہ ملزمان محمد دین وغیرہ نے اغواءکرکے محمد دین جھجھر کے ڈیرہ پر لے جاکر 20 سالہ نشائستہ کو گن پوائنٹ پر تمام ملزمان گینگ ریپ کرتے رہے جس سے ڈانسر نشائستہ کی حالت غیر ہوگئی ۔ملزمان نے اسے چھوڑ کر شہناز پر تشدد کرتے ہوئے اسے بھی گینگ ریپ کا نشانہ بنانے کی کوشش کی مقامی پولیس نے رقاصہ کا میڈیکل رپورٹ آنے کے بعد 9 ملزمان کے خلاف تھانہ حجرہ میں مقدمہ درج کرکے مرکزی ملزمان کو گرفتار کرلیا بقیہ ملزمان فرار ہوگئے تھے ۔

ڈانسر نشائستہ نے مقامی پولیس اور بااثر ملزمان کے دباﺅ میں آکر دو ملزمان سے 80 ہزار کی رقم وصول کرکے ملزمان کو معافی کا اشٹام دے دیا اور بقیہ ملزمان کے ساتھ پولیس کا مک مکا جاری ہے۔

مزید : جرم و انصاف