وہ یورپی گاؤں جہاں مرد جھاڑیوں کا روپ دھار کر خواتین کو تالاب میں پھینکتے ہیں

وہ یورپی گاؤں جہاں مرد جھاڑیوں کا روپ دھار کر خواتین کو تالاب میں پھینکتے ...
وہ یورپی گاؤں جہاں مرد جھاڑیوں کا روپ دھار کر خواتین کو تالاب میں پھینکتے ہیں

  

جینیوا (نیوز ڈیسک) دنیا کے مختلف علاقوں میں مختلف قسم کے رسوم و رواج پائے جاتے ہیں مگر سوئٹزر لینڈ کے دیہاتی علاقوں میں پائی جانے والی رسم Pfingstbluttlern کچھ زیادہ ہی عجیب ہے۔

معمولی حادثے نے نوجوان کی زندگی میں اندھیرا کر دیا ،جاننے کے لئے کلک کریں

مشہور گاﺅں Etlingen سمیت متعدد دیہاتوں میں مرد اپنے جسم پر ٹہنیاں اور پتے باندھ کر جھاڑیوں کا روپ دھار لیتے ہیں اور سڑک کنارے کھڑے ہوجاتے ہیں۔ جب کوئی دوشیزہ انہیں پودے سمجھ کر قریب سے گزررہی ہوتی ہے تو یہ لپک کر اسے اچک لیتے ہیں اور پھر قریب موجود تازہ پانی کے تالاب میں جا پھینکتے ہیں۔ یہاں یہ کام کسی بھی دوشیزہ کے ساتھ کسی بھی وقت ہوسکتا ہے۔

 مقامی لوگوں کا ماننا ہے کہ یہ رسم خواتین کی جنسی زرخیزی بڑھاتی ہے اور ان کی اولاد پیدا کرنے کی صلاحیت میں اضافہ کرتی ہے۔ یہ رائے بھی پائی جاتی ہے کہ اس رسم کی آڑ میں اکثر نوجوان لڑکیوں کو زیادتی کا نشانہ بنایا جاتا ہے اور پھر یہ دعویٰ کیا جاتا ہے کہ اس رسم کی وجہ سے خواتین اولاد کی دولت سے مالا مال ہورہی ہیں۔

مزید : ڈیلی بائیٹس