ہمارے جو لختِ جگر جوانیوں کو قوم وملت کے لیے قربان کررہے ہیں، وہ ہمارے ہیرو ہیں ‘علی گیلانی

ہمارے جو لختِ جگر جوانیوں کو قوم وملت کے لیے قربان کررہے ہیں، وہ ہمارے ہیرو ...

  

سری نگر(کے پی آئی)حریت کانفرنس گ کے چیرمین سید علی گیلانی نے کہا کہ ہمارے جو لختِ جگر آج بھی اپنی اٹھتی جوانیوں کو قوم وملت کے لیے قربان کررہے ہیں، وہ ہمارے ہیرو ہیں اور وہ ہر حیثیت سے عزت واحترام اور یاد رکھنے کے قابل ہیں، لوگ اگر شہید پارک کے صدر دروازے پر ان کے ناموں کی یاد گار قائم کرانا چاہتے ہیں تو یہ ایک اچھا قدم ہے جس کا دوسرے اضلاع میں بھی اہتمام ہونا چاہیے پلوامہ میں پچھلے ایک ہفتے سے جاری ہڑتال پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ شہید پارک کے صدر دروازے پر شہداکے ناموں کا یادگاری بورڈ نصب کرنے کا عوامی مطالبہ ایک جائز اور معقول مطالبہ ہے اور انتظامیہ اور پولیس کا اس بورڈ کے لگانے میں رکاوٹ ڈالنا بلا جواز اور غیر ضروری عمل ہے۔ گیلانی نے حکومت کو خبردار کیا کہ اس معاملے پر اس کی ناروا ہٹ دھرمی جاری رہی تو اس کے سنگین نتائج برآمد ہوں گے اور حریت پوری ریاست میں لوگوں کو اس کے خلاف احتجاج کرنے کی اپیل کرے گی۔

انہوں نے اس بات پر بھی سخت تشویش کا اظہار کیا کہ پلوامہ میں جاری تازہ احتجاج کے دوران میں غلام محمد نامی ایک دوکاندار لاپتہ ہوگیا ہے اور پچھلے 4دنوں سے اس کے بارے میں کوئی معلومات نہیں ہے کہ اس کو پولیس یا کس دوسری ایجنسی نے حراست میں لے کر لاپتہ کردیا ہے۔ گیلانی نے کہا کہ پلوامہ میں شہید پارک 1931 کے شہداکے نام کے ساتھ منسوب ہے اور جب سے اس کی ایک تاریخی اہمیت بنی ہوئی ہے۔ انہوں ۔ انہوں نے البتہ کہا کہ یہ بات ہمارے لئے ناقابل فہم ہے کہ پولیس اس میں مانع کیوں بن رہی ہے اور وہ بورڈ نصب کرنے کی اجازت کیوں نہیں دیتی ہے؟ گیلانی نے کہا کہ شہداکی یادگار قائم ہوجائے تو اس سے کسی کی صحت پر کوئی برا اثر نہیں پڑے گا، البتہ پولیس جس طرح سے اس میں رکاوٹ ڈال رہی ہے اور عوامی مطالبے کو طاقت کے ذریعے سے دبانا چاہتی ہے تو اس سے یقینی طور امن وقانون کا مسئلہ پیدا ہوجاتا ہے اور اس کے مزید خراب ہونے کا احتمال ہے، انتظامیہ اور پولیس نوجوانوں کو احتجاج کرنے پر مجبور کررہی ہے اور یہ کوئی معقول بات نہیں ہے۔گیلانی نے پولیس کو ہٹ دھرمی ترک کرنے کا مشورہ دیتے ہوئے کہا کہ اس کے بلاجواز روئیے پر حریت کانفرنس خاموش نہیں رہے گی اور اس کی غنڈہ گردی جاری رہی تو حریت کانفرنس اس کے خلاف بھرپور احتجاج بلند کرے گی۔

مزید :

عالمی منظر -