کمشنری نظام کی بحالی انتخابات ہائی جیک کرنے کی منصوبہ بندی ہے،عابد صدیقی

کمشنری نظام کی بحالی انتخابات ہائی جیک کرنے کی منصوبہ بندی ہے،عابد صدیقی

  

لاہور(نمائندہ خصوصی ) پاکستان پیپلز پارٹی کے سینئر رہنما عابد حسین صدیقی نے کہا ہے کہ پنجاب میں کمشنری نظام کی بحالی 2018 کے انتخابات کو ہائی جیک کرنے کی منصوبہ بندی ہے۔ مسلم لیگ ن کے غیر جمہوری اقدامات کا خمیازہ عوام کو بھگتنا پڑتا ہے اس جماعت کی پالیسیوں کی وجہ سے پہلے ہی مارشل لاء کا نفاذ ہو چکا ہے۔ یہاں سے جاری ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ مقامی حکومتوں کا نظام تمام ترقی یافتہ جمہوری و فلاحی مملکتوں کے لئے مرکزی حیثیت رکھتا ہے۔ کئی ترقی پذیر ممالک نے بھی اقتصادی خوشحالی اور سماجی بہتری کی راہ پر تیزی سے گامزن ہونے اور تمام شہریوں تک ترقیاتی منصوبوں کے ثمرات پہنچانے کے لئے مقامی حکومتوں ہی کا نظام اپنایا ہے۔ لیکن پنجاب حکومت نے پندرہ سال بعد ڈپٹی کمشنر کا عہدہ بحال کر کے بلدیاتی نظام کی روح کو ہی ختم کردیا۔ پنجاب سول ایڈمنسٹریشن آرڈیننس 2016ء کے تحت ہر ڈویژن، ضلع اور تحصیل کی سطح پر کو آرڈینیشن کمیٹیاں بنیں گی جن میں متعلقہ قومی اور صوبائی اسمبلی کے ارکان اور بلدیاتی نمائندے ماتحت کی حیثیت سے شریک ہوں گے اور بالترتیب کمشنر، ڈپٹی کمشنر اور اسسٹنٹ کمشنر ان کے اجلاسوں کی صدارت کریں گے۔ تحصیل، ضلع اور ڈویڑن میں امن و امان کا قیام، انتظامی و مالی اختیارات اور ترقیاتی کام ڈپٹی کمشنر کی مرضی کے ہوں گے۔ انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ ن کی بدنیتی پوری قوم پر عیاں ہو چکی ہے۔ عوام نے مسلم لیگ ن کی پالیسیوں کو مسترد کر دیا ہے۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -