سول ججزکے امتحان میں این ٹی ایس کے پاسنگ مارکس 50فیصد کئے جائیں،ہائی کورٹ بار

سول ججزکے امتحان میں این ٹی ایس کے پاسنگ مارکس 50فیصد کئے جائیں،ہائی کورٹ بار

  

لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہور ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن نے مطالبہ کیا ہے کہ سول ججوں کے امیدواروں کے امتحان میں این ٹی ایس کے پاسنگ مارکس 50فیصد کئے جائیں۔سپریم کورٹ کے فیصلہ کی رو سے اور آئین کی پاسداری کرتے ہوئے انگریزی کی جگہ اردو زبان رائج کی جائے ،ایڈیشنل سیشن جج کا امتحان ،سول جج ، جوڈیشل مجسٹریٹ کے امتحانات کا طریقہ کار یکساں کیا جائے،بار کونسلز اور ہائیکورٹ بار ایسوسی ایشنز کی مشاورت کے ساتھ سول ججز، جوڈیشل مجسٹریٹس اور ایڈیشنل سیشن ججز کو منتخب کرنے کے لئے طریقہ کار اور لائحہ عمل مرتب کیا جائے۔ یہ مطالبہ ہائی کورٹ بار کے اجلاس عام میں منظور ہونے والی ایک قرار داد کے ذریعے کیا گیا ،یہ قرار داد حسن اقبال وڑائچ ایڈووکیٹ کی طرف سے پیش کی گئی تھی جس میں کہا گیا تھا کہ سول ججوں کے امیدواروں کے لئے این ٹی ایس میں پاسنگ مارکس 70فیصد کردیئے گئے ہیں جو کہ ایڈیشنل سیشن جج کے عہدہ کے امیدواروں کے مساوی ہے جبکہ سول ججوں کے امتحان کا سلیبس ایڈیشنل سیشن ججوں سے بھی مشکل ہے ۔گریڈ 17کا امتحان گریڈ20سے مشکل کر دیا گیا ہے لاہور ہائیکورٹ بار ایسوسی ایشن مطالبہ کرتی ہے کہ سول جج و جوڈیشل مجسٹریٹ اور ایڈیشنل سیشن جج کا سلیبس این ٹی ایس ایک جیسا کیا جائے یا پھر سول جج و جوڈیشل مجسٹریٹ کا سابقہ سلیبس اوراین ٹی ایس پاسنگ مارکس ماضی کی طرح 50فیصد مقرر کئے جائیں۔اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے ہائی کورٹ بار کے صدر رانا ضیاء عبدالرحمن نے کہا کہ ہماری بد قسمتی ہے کہ جب بھی کوئی اعلیٰ عہدہ پر فائز ہوتا ہے وہ دوسروں کیلئے روڑے اٹکانا شروع کر دیتا ہے۔ ہائیکورٹ کا جج بننے کے لئے نہ این ٹی ایس اور نہ ہی انٹرویو کی ضرورت ہوتی ہے اور سول جج، جوڈیشل مجسٹریٹس اور اے ایس آئی کے لئے این ٹی ایس کیوں ضروری ہے؟ قومی زبان رائج کرنے کا سپریم کورٹ کا فیصلہ ہے۔ انگلش کو سر پر سوار نہ کرنا چاہئے۔ اعلیٰ عہدوں پر بیٹھے دوسروں کے لئے مشکلات پیدا نہ کریں نوجوانوں میں کافی قابلیت ہے۔ انہوں نے کہا کہ سپریم کورٹ کے فیصلہ اور آئین کی پاسداری کرتے ہوئے میڈیم اردو کیا جائے۔ ایڈیشنل سیشن جج امتحان اور سول جج امتحان کا طریقہ کار یکساں کیا جائے اور مشاورت کے ساتھ مستقبل کا طریقہ کار اور لائحہ عمل بنایا جائے، اجلا س سے ہائی کورٹ بار کے سیکرٹری محمد انس غازی ،محمد مشتاق موہل اور عاصم شہزاد بھٹی نے بھی خطاب کیا۔

مزید :

علاقائی -