امریکہ خونخولردرندہ، مسلمانوں کے خون کا پیاسا، امہ ہوش کے ناخن لے: فضل الرحمن

امریکہ خونخولردرندہ، مسلمانوں کے خون کا پیاسا، امہ ہوش کے ناخن لے: فضل ...

  



سکھر(آئی این پی) قائد جمعیت علماء اسلام مولانا فضل الرحمن نے کہا ہے کہ امریکہ خوانخوار درندہ اور مسلمانوں کے خون کا پیاسہ ہے، افغانستان سے لیکر لیبا تک لاکھوں مسلمانوں کا خون پینے کے باوجود ابھی اس کا پیٹ نہیں بھرا، وہ ایک بار پھر مسلمانوں کے خون سے ہولی کھیلنا چاہتا ہے، امریکہ ایران پر جارحیت کر کے خطے کو ہولناک جنگ اور فرقہ وارانہ فسا دت کی آگ میں جھونکنے کی سازش کر رہا ہے۔ امت مسلمہ ہوش کے ناخن لے متحد ہوکر امریکہ کے مذموم عزائم اور سازشوں کو ناکام بنائے، پاکستان مشرف والی غلطی نہ دہرائے کسی صورت میں بھی امریکہ کو اپنی سر زمین استعمال کرنے مت دی جائے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے جے یو آئی کے مرکزی نائب امیر مولانا عبدالقیوم ہالیجوی سندھ کے نا ئب امیر مولانا سید سراج احمد شاہامروٹی،مولانا عبیداللہ بھٹو، سندھ کونسل کے ممبر مولانا عبدالحق مہر کیساتھ ٹیلیفونک گفتگو کے دوران کیا۔ مقامی ترجمان مولانا عبدالحق مہر کی جانب سے جاری بیان کے مطابق قائد جمعیت کامزید کہنا تھا امریکہ کبھی اسامہ کبھی صدام کبھی قذافی کبھی قاسم سلیمانی کو دہشت گرد بنا کر مسلمان ممالک کو نشانہ بناتا ہے اب یہ خونی کھیل بند کر دے تمام ممالک کے عوام کا مطالبہ ہے کہ اب وہ واپس جائے۔ پاکستان خطے اور برادر اسلامی ممالک سے الگ تھلگ نہیں رہ سکتا موجودہ حکومت کی اس صورتحال میں خاموش تماشائی کا کردار ادا کرنے کی پالیسی خطے اور خود پاکستان کے مفادات کے منافی ہے۔ حکومت کو دوست ممالک کے ہنگامی دورے کر کے خطے میں عدم استحکام کا باعث بنے والے امریکی موجودگی کے خطرات سے آگاہ کرنا چاہیے مگر یہ بدقسمتی سے ملک میں مغربی غلام اور سلیکٹڈ حکومت مسلط ہے وہ عوامی امنگوں کے مطابق فیصلے نہیں کرسکتی، موجودہ یہودی ایجنٹو ں کی حکومت کو ہٹائے بغیر ملک جمہوریت اور معیشت کو مستحکم نہیں بنایا جاسکتا، حکومت نے 2020 کو خوشخبری کا سال قرار دیا تھا مگر اس کے برعکس پہلے مہینے میں ہی مہنگائی، بیروزگاری میں کئی گنا اضافہ کر دیا ہے۔ ہم کل بھی موجودہ حکومت کیخلاف اور عوام کیساتھ تھے اور آج بھی ہیں، ہم نے آزادی مارچ کر کے عوام دشمن حکومت کی جڑیں کاٹ دی ہیں، اب وہ سکڑ رہی ہے یہ ہمارے اس مارچ کا ہی نتیجہ ہے کہ جن کو حکمراں چور کہتے تھے آج ان کے پاؤں پڑنے پر مجبور ہیں۔ اب یوٹرن خان کا آخری یوٹرن آرہا ہے، وہ گھر واپسی کا یوٹرن ہے، اب اسلام آباد مارچ نہیں بلکہ جشن آزادی مارچ لیکر جائینگے۔

فضل الرحمن 

مزید : صفحہ آخر