کار حادثے کے بعد آدمی بے ہوش، 4 ماہ بعد ہوش آیا تو آرٹسٹ بن چکا تھا، ناقابل یقین واقعہ

کار حادثے کے بعد آدمی بے ہوش، 4 ماہ بعد ہوش آیا تو آرٹسٹ بن چکا تھا، ناقابل ...
کار حادثے کے بعد آدمی بے ہوش، 4 ماہ بعد ہوش آیا تو آرٹسٹ بن چکا تھا، ناقابل یقین واقعہ

  



نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) امریکہ میں ایک شخص کو خوفناک کارحادثے میں سر پر شدید چوٹ لگی اور وہ چار ماہ تک بے ہوش رہا۔ مگر جب ہوش میں آیا تو اس کے اندر ایک ایسی حیران کن صلاحیت پیدا ہو چکی تھی کہ سن کر آپ دنگ رہ جائیں گے۔ میل آن لائن کے مطابق یہ 42سالہ سکاٹ میلے نامی شخص امریکی ریاست نارتھ کیرولینا کے شہر ولمنگٹن کا رہائشی تھی۔ 2015ءمیں ایک روز وہ ایک چوراہے پر اپنی گاڑی میں بیٹھا کسی شخص کا انتظار کر رہا تھا کہ دوسری طرف سے 113کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے ایک گاڑی آئی اور اس کی کھڑی ہوئی گاڑی سے ٹکرا گئی جس سے وہ شدید زخمی ہو گیا اور اس کے سر پر بھی بہت گہری چوٹ آئی۔

رپورٹ کے مطابق سکاٹ ایک سیلز مین تھا اور تمام عمر اس نے یہی کام کیا تھا مگر جب اس چوٹ کے باعث چار ماہ کومہ میں رہنے کے بعد وہ ہوش میں آیا اور تو چند ہفتے بعد اسے احساس ہوا کہ اس کے اندر پینٹنگ کرنے کی ایک صلاحیت موجود ہے۔ وہ ایک روز اپنے بچوں کے سات ایک کرافٹ سٹور میں تھا جب اس میں یہ احساس اجاگر ہوا۔ اس نے پینٹنگ کا سامان خریدا اور گھر جا کر مصوری شروع کر دی۔ اس نے پہلی تصویر ہی ایسی خوبصورت بنائی کہ دیکھنے والے دنگ رہ گئے حالانکہ اس سے قبل تمام عمر مصوری کرنا تو دور، اسے کبھی اس کا خیال تک نہ آیا تھا۔

ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ دماغ کی چوٹ کے باعث سکاٹ کو ’اٹائپیکل ایکوائرڈ سیونٹ سنڈروم‘ (Atypical acquired savant syndrome)نامی عارضہ لاحق ہو گیا ہے۔ یہ ایسا عارضہ ہے جو دماغ پر چوٹ لگنے والوں مریضوں کو شاذ و نادر لاحق ہوتا ہے اور ان کے اندر کوئی نہ کوئی حیران کن تخلیقی صلاحیت پیدا ہو جاتی ہے، مگر یہ عارضہ دماغ پر چوٹ لگنے والے 10لاکھ لوگوں میں سے کسی ایک کو لاحق ہوتاہے۔اس وقت پوری دنیا میں صرف33ایسے لوگ ہیں جنہیں یہ عارضہ لاحق ہے۔ ان میں سے کسی میں موسیقی، کسی میں پینٹنگ ، کسی میں ریاضی وغیرہ جیسی صلاحیتیں پیدا ہوئیں۔ سکاٹ کا کہنا ہے کہ وہ اپنی اس نئی حیران کن صلاحیت پر بہت خوش ہے اور نت نئے فن پارے بنا رہا ہے۔ حالانکہ سکول میں جب کبھی وہ پینٹنگ بناتا تھا تو ایسی بری بناتا کہ ساتھی طلبہ اس کا مذاق اڑایا کرتے تھے۔

مزید : ڈیلی بائیٹس


loading...