ہائی کورٹ ملازمین کے الاﺅنسز میں اضافہ کے خلاف حکومت کی اپیل خارج

ہائی کورٹ ملازمین کے الاﺅنسز میں اضافہ کے خلاف حکومت کی اپیل خارج
ہائی کورٹ ملازمین کے الاﺅنسز میں اضافہ کے خلاف حکومت کی اپیل خارج

  


لاہور(نامہ نگار خصوصی )لاہور ہائیکورٹ کے دو رکنی بنچ نے عدالت عالیہ کے ملازمین کو جوڈیشل الاﺅنس اور ایڈہاک ریلیف الاﺅنس میں اضافہ ادا کرنے کا سنگل بنچ فیصلہ بحال رکھتے ہوئے محکمہ خزانہ پنجاب کی اپیل خارج کر دی ۔ مسز جسٹس عائشہ اے ملک اور مسٹر جسٹس فیصل زمان پر مشتمل دو رکنی بنچ نے محکمہ خزانہ کی انٹرا کورٹ اپیل پر سماعت کی ، ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل شان گل نے موقف اختیار کیا کہ پنجاب حکومت وزیر اعظم کے کسی بھی حکم پر عملدرآمد کی پابند نہیں ہے، پنجاب حکومت مالی مشکلات کا شکار ہے اور ویسے بھی قانون کے مطابق عدالتی ملازمین کو جوڈیشل الاﺅنس اور ایڈہاک ریلیف الاﺅنس میں اضافہ دینے کیلئے گورنر پنجاب کی منظوری لینا لازمی ہے، ہائیکورٹ ملازمین کی طرف سے اظہر صدیق ایڈووکیٹ نے موقف اختیار کیا کہ وزیر اعظم، قومی عدالتی پالیسی ساز کمیٹی، ہائیکورٹ کی انتظامی کمیٹی کے علاوہ عدالت عالیہ کا سنگل بنچ الاﺅنسز کا حکم جاری کر چکے ہیں، اس کے بعد کسی گورنر سے منظوری کی ضرورت نہیں ہے،آئین کے تحت عدلیہ ایک آزاد اور خودمختار ادارہ ہے، اس کی آزادی پر کوئی قدغن نہیں لگائی جا سکتی مگر مسلم لیگ ن کی حکومت کی کوشش ہے کہ کسی طرح سے ہائیکورٹ کے ملازمین کو ان کا حق نہ ملے، الاﺅنسز کی ادائیگی عدلیہ کا پالیسی معاملہ ہے اور انتظامیہ اس میں مداخلت نہیں کر سکتی، فاضل بنچ نے تفصیلی دلائل سننے کے بعدسنگل بنچ کا فیصلہ بحال رکھتے ہوئے محکمہ خزانہ پنجاب کی اپیل مسترد کر دی ۔

مزید : لاہور


loading...