ترقی کیلئے ہاتھ ملائیں ، سڑکوں کا جال بچھائیں ،وزیراعظم نواز شریف کی برکس اجلاس میں تجاویز

ترقی کیلئے ہاتھ ملائیں ، سڑکوں کا جال بچھائیں ،وزیراعظم نواز شریف کی برکس ...

 اوفا (اے پی پی) وزیراعظم محمد نواز شریف نے عوامی سطح پر رابطوں، امن و سلامتی میں اعتماد سازی، عوام کی بہبود کیلئے برکس ممالک کے مابین تجارت و علاقائی رابطوں کی کثیرالجہتی اپروچ کی تجویز دی ہے۔ شنگھائی تعاون کونسل کے اجلاس کے موقع پر برکس آؤٹ ریچ میٹنگ سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم نے کہا کہ پاکستان برکس ممالک کے مابین باہمی رابطوں کی قدر کرتا ہے جو ہمارے خطے اور اس سے باہر کے اہم ممالک پر مشتمل ہے۔ وزیراعظم اپنے وفد کے ہمراہ اوسلو کے دورے بعد دوسرے مرحلے میں روس پہنچے تاکہ وہ شنگھائی تعاون کونسل اور ساتویں برکس سربراہی اجلاس میں پاکستان وفد کی قیادت کریں۔ وفد میں بیگم کلثوم نواز، قومی سلامتی اور خارجہ امور پر مشیر سرتاج عزیز اور وزیراعظم کے خصوصی معاون طارق فاطمی شامل تھے۔ جونہی وزیراعظم برکس آؤٹ ریچ میٹنگ میں شرکت کیلئے کانگرس ہال پہنچے روسی صدر ولادمیر پیوٹن نے ان کا استقبال کیا۔ اپنے خطاب میں وزیراعظم نے لوگوں کی بہتری اور فلاح و بہبود پر اجتماعی توجہ دینے پر زور دیا۔ انہوں نے باہمی مفاہمت، تعاون اور ثقافت ، تعلیمی رابطوں اور عوام کی سطح پر رابطوں کے ذریعے خیرسگالی کو فروغ دینے کی تجویز پیش کی۔ اعتماد کے فروغ پر گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ مشترکہ خوشحالی کی کوششوں کیلئے امن اور سلامتی میں اعتماد سازی لازمی جزو ہے۔ وزیراعظم نے تجویز دی کہ باہمی اور علاقائی تجارت کو فروغ دینے کیلئے جامع قوانین متعارف کرانے کیلئے تعاون، ٹیرف میں کمی، غیرٹیرف رکاوٹوں اور لوگوں اور تجارت کی آسان نقل و حمل کو فروغ دیا جائے۔ انہوں نے کہا کہ بہتر ٹرانسپورٹ نیٹ ورک بشمول شاہراہوں، موٹرویز، ریلویز، فضائی اور سمندری رابطوں میں سرمایہ کاری کیلئے رابطوں کو فروغ دینا ضروری ہے۔ انہوں نے ساتویں برکس سربراہی اجلاس اور 15ویں ایس سی او سمٹ کی میزبانی پر صدر پیوٹن کا شکریہ ادا کیا۔ وزیراعظم نے کہا کہ ہم اپنے میزبان صدر ولادی میر پیوٹن اور حکومت رشین فیڈریشن کے شکرگزار ہیں جنہوں نے ایس ای او اور برکس کے رکن ممالک کو ایک چھت تلے جمع کیا۔انہوں نے کہا کہ یہ کوشش معاشی ترقی کیلئے شمولیتی اور اجتماعی اپروچ کو فروغ دے گی۔یہ سمٹ پاکستان کے شنگھائی تعاون آرگنائزیشن کا رکن بننے پر اتفاق رائے کو بھی ظاہر کرتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کی معاشی ترقی کی شرح مستحکم ہے۔ وزیراعظم نے کہاکہ پاکستان کی معیشت ترقی کی راہ پر گامزن ہے۔ پائیدار اور جامع ترقی کیلئے وژن 2025ء ایک ٹھوس پلیٹ فارم مہیا کرے گا۔ انفراسٹرکچر، پاور اور قدرتی وسائل کے شعبہ جات میں سرمایہ کاری کے بڑے مواقع موجود ہیں۔ وزیراعظم نے کہا کہ ان کا تصور خطے میں ترقی کیلئے امن اور امن کیلئے ترقی ہے، پاکستان سارک اور ای سی او سمیت دیگر علاقائی فورمز پر فعال کردار ادا کر رہا ہے، پاکستان مستقبل میں سارک اور ای سی او کے سربراہ اجلاس کی میزبانی کرے گا۔وزیراعظم نے کہا کہ ایس ای او اور برکس ممالک کے تعاون سے پاکستان اپنے عوام کی خوشحالی اور ترقی کے فروغ کیلئے کوشاں ہے۔ چین کے تعاون سے پاکستان اقتصادی راہداری کی تعمیر کر رہا ہے جو چینی صدر ژی جن پینگ کے ون روڈ، ون بیلٹ تصور کا اہم حصہ ہے۔انہوں نے کہا کہ پاکستان کا دہشت گردی کے خلاف حالیہ آپریشن پاکستان کے تحفظ کیلئے ہے بلکہ خطہ کے امن اور عالمی برادری کیلئے ہے اس جنگ میں پاکستان نے بڑی تعداد میں انسانی اور معاشی نقصانات اٹھائے ہیں تاہم اس سے دہشت گردی اور انتہا پسندی کے خلاف ہماری لڑائی کا عزم کمزور نہیں ہوا، ہم اس مہم کو اس کے منطقی انجام تک پہنچائیں گے تاکہ خطہ میں امن اور خوشحالی کے مقاصد حاصل کئے جاسکیں۔ انہوں نے برکس ممالک سے کہا کہ وہ خطے کی ترقی اور امن کے فروغ کیلئے مل جل کر کام کریں۔

مزید : صفحہ اول


loading...