فیصل آبادچیمبر کا دونئے ڈیموں کی تعمیرفوری شروع کرنے کے فیصلے کا خیرمقدم

فیصل آبادچیمبر کا دونئے ڈیموں کی تعمیرفوری شروع کرنے کے فیصلے کا خیرمقدم

فیصل آباد ( بیورورپورٹ) فیصل آباد چیمبر آف کامرس اینڈانڈسٹری کے صدر شبیر حسین چاولہ نے سپریم کورٹ کے چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کی طرف سے وطن عزیز کو بھارت کی آبی جارحیت سے بچانے اور مستقبل کیلئے سستی بجلی کی بڑھتی ہوئی ضروریات کو پورا کرنے کیلئے دو نئے ڈیموں کی فوری تعمیر شروع کرنے کے فیصلے کا خیر مقدم کیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اس وقت پاکستان کی معیشت کو جن مسائل کا سامنا ہے ان میں پانی اور بجلی کی قلت سر فہرست ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ گزشتہ دہائیوں کے دوران صرف بجلی کی لوڈ شیڈنگ کی وجہ سے ملکی شرح نمو میں دو فیصد کی کمی ریکارڈ کی گئی جبکہ مہنگی بجلی کی وجہ سے قومی برآمدات بھی بری طرح متاثر ہوئیں ۔ انہوں نے حالیہ اعداد و شمار کا ذکر کرتے ہوئے بتایا کہ صرف گزشتہ چند سالوں کے درمیان درآمدات اور برآمدات میں فرق غیر معمولی طور پر بڑھ گیا ہے جس کی وجہ سے روپے کی قدر میں کمی کا نہ ختم ہونے والا سلسلہ شروع ہو چکا ہے۔ مزید برآں برآمدات میں کمی سے اندرون ملک صنعتی سرگرمیوں میں کمی کے ساتھ ساتھ بے روزگاری کا طوفان بھی سر اٹھا رہا ہے۔ انہوں نے چیف جسٹس کی دور اندیشی کو سراہا جنہوں نے پانی اور بجلی کے اہم ترین مسائل پر محض زبانی جمع خرچ کرنے کی بجائے نہ صرف خود ان کی تعمیر کیلئے دس لاکھ روپے کا عطیہ دے کر اس مثبت کام کی ابتداء کی ہے۔ انہوں نے کہا کہ چیف جسٹس کی پیروی کرتے ہوئے دیگر لوگوں نے بھی ڈیموں کی تعمیر کیلئے عطیات دینے کا سلسلہ شروع کر دیا ہے جبکہ مختلف بینکوں نے عطیات کی وصولی کیلئے خصوصی انتظامات بھی کئے ہیں۔انہوں نے فیصل آباد چیمبر آف کامرس اینڈانڈسٹری کے ممبروں اور شہر کے دیگر سر کردہ تاجروں سے اپیل کی ہے کہ وہ بھی دل کھول کر نئے ڈیموں کی تعمیر کیلئے عطیات دیں تاکہ پاکستان کی مستقبل کی آبی اور بجلی کی ضروریات کو پورا کیا جا سکے۔ شبیر حسین چاولہ نے مزید کہا کہ بھا شا اور منڈا ڈیم کے ساتھ ساتھ کالاباغ ڈیم کی تعمیر کیلئے بھی بینکوں میں الگ الگ اکاؤنٹ کھولیں جائیں تاکہ لوگ اپنی مرضی سے جس ڈیم کو ترجیح دیتے ہیں اس کے اکاؤنٹ میں رضا کارانہ طور پر اپنے عطیات جمع کرا سکیں۔

انہوں نے کہا کہ اس طرح عطیات کے ذریعے غیر سرکاری ریفرنڈم بھی ہو سکے گا کہ پاکستان کے لوگ کس ڈیم کی تعمیر کو ترجیح دیتے ہیں اور کسے پہلے تعمیر کرانا چاہتے ہیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ کالا باغ ڈیم پاکستان کیلئے زندگی اور موت کا مسئلہ جسے محض سیاستدانوں نے اپنی انا کا مسئلہ بنا رکھا ہے حالانکہ اس سے جہاں بڑے پیمانے پر سستی بجلی پیدا ہو گی وہاں چاروں صوبوں کے وسیع بے آباد علاقوں کو کاشتکاری کیلئے بھی استعمال کیا جا سکے گا۔ مزید برآں کالاباغ ڈیم کی وجہ سے سیلابوں کی صورت میں بنیادی ڈھانچے کو پہنچنے والے نقصا ن سے بھی بچا جا سکے گاجبکہ آبپاشی کی ضروریات کیلئے زیادہ مقدار میں پانی کا ذخیرہ بھی کیا جا سکے گا۔

مزید : کامرس

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...