12 ویں سٹی۔ پی پی اے ایف مائیکروانٹریپرینیورشپ ایوارڈز تقریب

12 ویں سٹی۔ پی پی اے ایف مائیکروانٹریپرینیورشپ ایوارڈز تقریب

لاہور(پ ر) پاکستان پاورٹی ایلیوئیشن فنڈ (پی پی اے ایف) اور سٹی بینک این اے پاکستان کے فلاحی ادارے سٹی فاؤنڈیشن (Citi Foundation) کے اشتراک سے قائم 12 ویں سٹی۔ پی پی اے ایف مائیکروانٹریپرینیورشپ ایوارڈز (سی ایم اے) تقریب کا انعقاد ہوا جس میں ایوارڈ جیتنے والے افراد کا اعلان کیا گیا۔ اس موقع پر تقریب میں مہمان خصوصی اسٹیٹ بینک آف پاکستان کے گورنر طارق باوجوہ تھے ۔کراچی سے تعلق رکھنے والے نسیم مسیح اور حیدرآباد کی صنوبر نے 12ویں سی ایم اے قومی ایوارڈز جیتے ہیں۔ نسیم مسیح ایک سلائی مرکز کے مالک ہیں جو ماہانہ 50 ہزار سے 60 ہزار روپے کماتے ہیں اور اپنے اس مرکز میں وہ 5 ہزار لڑکیوں کو سلائی کی تربیت فراہم کرچکے ہیں۔ جسمانی معذوری کے باوجود نسیم نے کبھی ہمت نہ ہاری بلکہ فرسٹ مائیکروفنانس بینک لمیٹڈ کی جانب سے اپنا کام شروع کرنے کے لئے ان کی حوصلہ افزائی کی گئی۔ اس کے بعد نسیم نے ایک لمبا سفر طے کیا۔ اپنے کام آغاز انہوں نے محض 2 سے 3 سلائی مشینوں سے کیا اور اب وہ 100 سے زائد مشینوں کے ساتھ اپنا سلائی مرکز چلا رہے ہیں۔ نسیم کا سفر اب ایک مثال بن چکا ہے ہے۔ اب وہ اپنا کام پھیلانے کے لئے دیگر علاقوں میں بڑی سطح پر نئے سلائی مرکز کھولنے کی منصوبہ بندی کررہے ہیں ۔ نسیم مسیح بتاتے ہیں، "عام طور پر معذور افراد کو قبول کرنے اور لوگوں کا اعتماد حاصل کرنے میں مشکلات کا سامنا رہتا ہے۔ مجھے بھی بہت پریشانیوں کا سامنا رہا لیکن فرسٹ مائیکروفنانس بینک لمیٹڈ کی جانب سے موقع فراہم کرنے کے بعد اب میری زندگی مکمل طور پر تبدیل ہوگئی ہے۔" حیدرآباد کے دور دراز مقام پر چھوٹے سے علاقے میں رہنے والی صنوبر مقامی سطح پر معیشت میں اہم کردار ادا کرتی ہیں۔ آج وہ ایک پولٹری شاپ کی مالک ہیں لیکن انہوں نے اپنے کام کا آغاز عام سے ٹھیلے پر مرغیاں بیچنے سے شروع کیا ۔ وہ یومیہ 5ہزار روپے سے زائد کماتی ہیں اور ان کا ارادہ ہے کہ وہ مزید سرمایہ کاری کرکے اپنے کاروبار کو مزید پھیلائیں۔ ابتداء میں گھر کے افراد نے صنوبر کی حوصلہ شکنی کی لیکن آج اپنے گھر کے اخراجات پورے کرنے میں وہ سب سے زیادہ حصہ ڈالتی ہیں جبکہ ان کی دکان پر 6افراد کام کرتے ہیں۔ صنوبر بتاتی ہیں، " میں نے کبھی نہیں سوچا کہ کبھی اس طرح پر پہنچ سکوں گی لیکن یہ سب کچھ خوشحالی مائیکروفنانس بینک کی بدولت ممکن ہوا۔

اگر مجھے یہ موقع نہ ملتا تو اب میری زندگی بہت مختلف ہوتی۔"

پی پی اے ایف کے سی ای او قاضی عظمت عیسیٰ نے کہا، "سال 2005 سے ہم سٹی۔ پی پی اے ایف مائیکرو انٹریپرینیورشپ ایوارڈز کے ذریعے چھوٹے کاروبار کرنے والے 450غیرمعمولی افراد کی نشاندہی کرچکے ہیں۔ ان چھوٹے کاروبار کرنے والے افراد کو غیرمعمولی ثابت قدمی اور بھرپور محنت کی بناء پر منتخب کیا جاتا ہے ۔ چھوٹے قرضوں کی سہولت کے ذریعے نہ صرف ان کی اپنی زندگیوں میں تبدیلی آئی ہے بلکہ انہوں نے مقامی آبادی کی ترقی میں بھی کردار ادا کیا ہے۔ سٹی پی پی اے ایف مائیکرو انٹریپرینیورشپ ایوارڈز ایسے لوگوں کے بہترین طریقوں کو سامنے لانے کا بہترین ذریعہ ہے اور اس طرح یہ چھوٹے قرضوں اور پھلتی پھولتی معیشت کی اہمیت سے متعلق آگہی مزید بڑھاتا ہے۔"

مزید : کامرس