6سیاسی جماعتوں کے سربراہوں پر حملے ہوسکتے ہیں: رحمان ملک

6سیاسی جماعتوں کے سربراہوں پر حملے ہوسکتے ہیں: رحمان ملک

اسلام آباد (صباح نیوز)سابق وزیرداخلہ سینیٹر رحمان ملک نے سینیٹ کو بتایا کہ نیکٹا کی رپورٹ میں ہے کہ چھ سیاسی جماعتوں کے سربراہوں پر قاتلانہ حملے ہو سکتے ہیں ان میں عمران خان، اسفند یار ولی ، نوازشریف، پیپلز پارٹی ، جمعیت علماء اسلام اور اے این پی کے رہنما شامل ہیں سیاسی جماعتوں کے سربراہوں کو فول پروف سیکورٹی دی جائے اگر حملے ہوتے ہیں تو اس کا ذمہ دار اس صوبہ کے وزیراعلٰی ہو گا ان خیالات کا اظہار پاکستان پیپلز پارٹی کے سینیٹر رحمان ملک اور سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے داخلہ کے چیئرمین رحمان ملک نے سوموار کو سینیٹ میں کیا رحمان ملک نے کہا کہ داعش اور آر ایس ایس آپس میں مل گئی ہے دشمن سرحدوں پر موجود ہے سب کو اتفاق سے ان چیلنجز کا مقابلہ کرنا ہو گا سیاسی جماعتوں کے لیڈرز کو سنگین جانی خطرہ ہے۔ حکومت ان کی حفاظت کے لیے کیا کام کر رہی ہے وزیر اعلٰی کو بھی بلا یا جائے اور ان سے حلف لیا جائے کہ اگر کسی پر حملہ ہوتا ہے تو اس کے ذمہ دار متعلقہ وزیر اعلٰی ہوں گے کس طرح ایک سینیٹر پر FIRکی گئی ہے عوام کے مفاد کا تحفظ کرنا ہے اور 25جولائی سب سے بڑا عوامی مفاد ہے TTP, RSSاور داعش نے ہاتھ ملا لیے ہیں بہت سے کام ہماری فوج نے کر دیے ہیں ٹرمپ کیطرف سے بیان آرہے ہیں اگر اتفاق نہیں ہو گا تو ہمارا نقصان ہو گا اور چیلنجز سے نکل نہ سکیں گے سینیٹ کا اجلاس 25جولائی تک جاری رہنا چاہیے دشمن سرحدوں پر بیٹھے ہیں سارے دھماکے اندر کے لوگوں نے کیے ہیں صرف اور صرف اتفاق سے ہی مسائل حل ہوں گے۔

مزید : علاقائی