سعودی عرب میں رواں ماہ ، افغان امن کانفرنس میں طالبان کو شرکت پر آمادہ کرنے کی کوشش جاری

سعودی عرب میں رواں ماہ ، افغان امن کانفرنس میں طالبان کو شرکت پر آمادہ کرنے ...

واشنگٹن (اظہر زمان، خصوصی رپورٹ) ماہ رواں کے آخر میں اسلامی ممالک کی تنظیم (اوآئی سی )اور سعودی عرب کے اشتراک سے ہونیوا لی افغان امن کانفرنس میں طالبان کو شریک کرنے کی بھرپور کوششیں جاری ہیں تاہم ابھی تک واضح نہیں ہوا وہ اس پر آمادہ ہوئے ہیں یا نہیں ، واشنگٹن کے سکیورٹی ماہرین نے یہ اطلاع دیتے ہوئے واضح کیا ہے کہ اگر طالبان شریک نہ ہوئے تو کانفرنس کے اصل مقاصد پورے نہیں ہوں گے۔ اس کانفرنس کی دو نشستیں 26اور27جولائی کو باترتیب جدہ اور مکہ میں منعقد ہونگی جس میں اسلامی ممالک کی تنظیم کے 57 مما لک کے نمائندوں کے علاوہ متعدد علماء اور مذہبی سکالرز شریک ہوں گے۔ یہ وہ سکالرز ہیں جن کا افغان گروہوں میں بہت اثر رسوخ ہے جو افغان جنگ کو غیر اسلامی قرار دے چکے ہیں ،امریکی میڈیا کے مطابق اس اجلاس کی تیاریاں زورشور سے جاری ہیں اور بتایا گیاہے ابھی تک افغان طالبان کی طرف سے شرکت یا عدم شرکت کا بیان جاری نہیں ہوا، تاہم انہوں نے اس کا پس منظر بتایا کہ قبل ازیں پاکستان ،افغا نستان اور انڈونیشیا اس قسم کی کانفرنسوں کے موقع پر منظور ہونیوالی قرار داروں پر طالبان ماضی میں منفی ردعمل کا اظہار کرتے رہے ہیں۔ ان اجلاسوں میں طالبان کی طرف سے جنگ کرنے اور ہتھیار اٹھانے کے عمل کو مسترد کرکے غیر اسلامی قرار دیاگیااسی بنیاد پر خدشہ ظاہر کیا جار ہا ہے شایدوہ شرکت پر آمادہ نہ ہوں۔ افغان امن کمیٹی میں شریک علماء طالبان اور دیگر دہشت گرد تنظیموں کی طرف سے خود کش حملوں اور بمبا ر ی کو اسلامی اصولوں کیخلاف قرار دے چکے ہیں، واشنگٹن کے سکیورٹی ماہرین نے طالبان لیڈروں کو مشورہ دیا ہے کہ سعودی عرب میں ہو نیو الی کانفرنس میں انہیں غیر مشروط شرکت کی دعوت دی ہے اور انہیں اس دعوت کا پورا فائدہ اٹھانا چاہتے یہ ان کے اپنے مفاد میں ہے کہ وہ جنگ کے ذریعے اپنی مرضی کا حل حاصل نہیں کرسکتے۔ اس کے برعکس وہ امن کانفرنس میں شرکت کرکے افغانستان کے آئندہ سیاسی عمل میں اپنا حصہ لے سکتے ہیں۔

B

مزید : علاقائی

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...