پاکستان نے ملکی سطح پر تیار جی پی ایس اور جی آئی ایس سے مزین 2سیٹلائٹس لانچ کر دیئے

پاکستان نے ملکی سطح پر تیار جی پی ایس اور جی آئی ایس سے مزین 2سیٹلائٹس لانچ کر ...

بیجنگ ،اسلام آباد(سٹاف رپورٹر) پاکستان نے ملکی سطح پر تیار کردہ جی پی ایس اور جی آئی ایس سے مزین دو مصنوعی سیارے چین کے خلائی راکٹ کے ذریعے مدار میں بھیج دئیے، مصنو عی سیارے چین کے راکٹ لانگ مارچ ایل ایم سی کے ذریعے بھیجے گئے۔ترجمان دفتر خارجہ ڈاکٹر محمد فیصل کی جانب سے جاری کیے گئے بیان کے مطابق سیٹلائٹ پی ایس ایس آر 1 اور پاک ٹیس اے 1 صبح 8 بجکر57منٹ پر چین سے لانچ کیے گئے، جنہیں مکمل طور پر پاکستان میں ہی تیار کیا گیا۔ترجمان دفتر خارجہ کے مطابق سیٹلائٹس کی تیاری سے پاکستان کا کمرشل انحصار انتہائی کم ہو جائے گا اور ڈیٹا کولیکشن ،پلاننگ، ریسورس مینجمنٹ اور معیارِ زندگی بہتر ہوگا۔دفتر خارجہ کے مطابق سیٹلائٹس لانچنگ سے پانی کے بحران، سیلاب اور قحط جیسے چیلنجز سے نمٹنے میں مدد ملے گی۔ترجمان دفتر خارجہ نے مزید بتایا کہ ان سیٹلائٹس کی مدد سے بارش کے پانی کی مقدار کو جانچنے اور سٹوریج کی پلاننگ میں مدد ملے گی۔دوسری جانب پاکستان میں جنگلات کی صورتحال اور پلاننگ میں بھی یہ سیٹلائٹس مددگار ثابت ہوں گے۔سرکاری ریڈیو کے مطابق ان میں سے ایک ریموٹ سینسنگ سٹیلائٹ پی آر ایس ایس ون ہے جو زمینی تجزیے اور دوربینی سیٹلائٹ پرمبنی ہے۔ اس سیٹلائٹ کے بھجوائے جانے کے بعد پاکستان مدار میں اپنا ریموٹ سینسنگ سیٹلائٹ رکھنے والے چند ممالک میں شامل ہوگیا ہے۔پی آر ایس ایس ون زمین اور قدرتی وسائل کے جائزے قدرتی آفات کی نگرانی، زراعت، تحقیق، شہری تعمیرات اور ایک پٹی اور شاہراہ کیلئے ریموٹ سینسنگ معلومات کی فراہمی کے لئے استعمال کیا جائے گا۔ دوسرا سیارہ Pak Tes 1Aہے جسے سپارکونے تیار کیا ہے جس سے ملک میں سیٹلائٹ کی تیاری کی صلاحیت میں اضافہ ہوگا۔چین میں پاکستان کے سفیر خالد مسعود نے سیارے بھجوائے جانے پر قوم کو مبارکباد دی ہے اور اسے خلائی ٹیکنالوجی میں ایک اہم سنگ میل قرار دیا ہے۔ انہوں نے سیٹلائٹ کو ملک کی سماجی و اقتصادی ترقی کیلئے اہمیت کا حامل قرار دیا ہے۔

پاکستانی مصنوعی سیارے

مزید : صفحہ اول