مردان ، مشہور آسماء قتل کیس کا فیصلہ ، ملزم کو عمر قید اور 10لاکھ جرمانہ

مردان ، مشہور آسماء قتل کیس کا فیصلہ ، ملزم کو عمر قید اور 10لاکھ جرمانہ

مردان (بیورورپورٹ) انسداد دہشت گردی کی عدالت نے مشہور آسماء قتل کیس کا فیصلہ سناتے ہوئے جرم ثابت ہونے پر مجرم کو عمر قید اور 10 لاکھ جرمانے کی سزا کا حکم سنادیا تھانہ صدر کے علاقہ جندرپارگوجرگڑھی میں 13جنوری 2018کو چارسالہ آسماء کو گھر کے قریب کھیلتے ہوئے اغواء کے بعد جنسی تشدد کا نشانہ بنانے کے بعد اسے قتل کردیاگیاتھا 14 جنوری 2018 کواسماء کی لاش اپنے گھر کے قریب گنے کے کھیتوں سے ملی تھی۔اس واقعے کے بعد چیف جسٹس سپریم کورٹ آف پاکستان نے واقعے پر از خود نوٹس لیتے ہوئے پولیس سے واقعے کی رپورٹ طلب کرلی تھی17 جنوری کو آئی جی خیبر پختونخوا صلاح الدین محسود نے ابتدائی میڈیکو لیگل رپورٹ کے حوالے سے بتایا تھا کہ اسماء کے ساتھ مبینہ طور پر زیادتی کی گئی اس اندھے قتل کیس کے بعد پولیس نے علاقے میں وسیع پیمانے پر سرچ اپریشن شروع کیا اور200سے زائد افراد کے خون کے سمپلز حاصل کرکے ڈی این اے کے لئے لاہور کے فرانزاک لیبارٹری بھیج دیئے تھے اس دوران معصوم بچی کا ڈین این اے اس کے ایک رشتہ دار پندرہ سالہ محمد نبی ولد عبیداللہ کے ساتھ میچ کرگیا جس کے بعد اسے حراست میں لے کر پوچھ گچھ کی گئی تو اس نے پولیس کے سامنے اعتراف جرم کرلیا لگ بھگ تین ماہ کے مختصر عرصے میں پولیس کی تفتیشی ٹیم نے انتھک محنت کے بعد چالان انسداد دہشت گردی کی عدالت میں پیش کیا پیر کے روز انسداد دہشت گردی کے خصوصی عدالت میں ملزم پر جرم ثابت ہوگیا عدالت کے جج یونس خان نے مجرم کو عمر قید اور دس لاکھ روپے کی سزاکا حکم سنادیا اس موقع پر پولیس کی بھاری جمعیت موجود تھی اورفیصلے کے بعد مجرم کو جیل منتقل کردیاگیا ۔

مزید : کراچی صفحہ اول