پشاور ،جوگن شاہ میں سکھ برادری نے امید واروں کو گوردوارہ آنے پر پابندی عائد کردی

پشاور ،جوگن شاہ میں سکھ برادری نے امید واروں کو گوردوارہ آنے پر پابندی عائد ...

پشاور (سٹی رپورٹر)پشاور شہر جوگن شاہ میں آباد سکھ برادری نے انتخابی مہم کے دوران ووٹ مانگے کے لئے ان کی عبادت گاہ گوردوارے میں آنے پر پابندی عائد کردی ہے ۔سکھ برادری کا کہنا ہے کہ پچھلے انتخابات کے طر ح اس دفعہ بھی بڑی تعداد میں امیدوار سکھ برادری سے ووٹ مانگے کے لئے مذہبی مقام گورد ورے کا روخ کرکے اپنے آپ کو پانچ سال کے قومی یاصوبائی اسمبلی کا امیدوار منتخب کرناچاہتا ہے لیکن بعدمیں ان کے حلقے میں آباد سکھ سمت دوسرے اقلیتی برادریوں کے لوگوں کو درپیش مسائل کے بارے میں کچھ نہیں کرتے ۔ مقامی لوگوں نے بتایا کہ آنے والے انتخابات میں اس امیدوار کو ووٹ دیا جائے گا جو اس بات کے ضمانت دے کہ منتخب ہونے کے بعد ان کے لوگوں کو درپیش مسائل ترجیحی بنیادوں پر حل کرسکتے ہیں ۔ علاقے کے مکینوں کے مطابق محلہ جوگن شاہ جہاں پر بڑی تعداد میں سکھ برادری کے لوگ آباد ہیں جو مختلف بنیادی مسائل سے دوچار ہیں جن میں بڑا مسئلہ علاقے میں سوئی گیس کی کم پریشر ہے جس کے وجہ سے مذہبی تقریبات کے دوارن مہمانوں کے لئے لنگر چلانا کافی مشکل ہوتا ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ پشاور میں سکھ اور ہندو برادری کیلئے منظور شدہ شمشان گھاٹ ابھی تک نہ بن سکا جس کی وجہ وہ اپنے مردوں کو دوسرے شہروں کے شمشان گھاٹوں کو لے جاتے ہیں انہوں نے بتایا کہ صفائی کے ناقص انتظام ، نکاس آب کے خراب نظام کے ساتھ سٹریٹ لائٹ کا بھی کوئی مناسب انتظام موجود نہیں۔ میت اور دوسرے مذہبی تقریبات کے تمام انتظامات گوردوارہ بھائی جوگن شاہ میں ہوتا ہے لیکن شادی بیاہ اور ردیگر تقریبات کے لئے لوگ بڑے مشکل سے کرائے پرہالوں کا روخ کرتے ہیں ۔

مزید : پشاورصفحہ آخر