بجٹ منظور ہونے سے پہلے ہی مہنگائی کی شرح میں اضافہ

بجٹ منظور ہونے سے پہلے ہی مہنگائی کی شرح میں اضافہ

  

اسلام آباد (آن لائن)وفاقی حکومت آئندہ مالی سال2014-15کا وفاقی بجٹ پارلیمنٹ میں پیش کرنے کے بعد آنے والے پہلے ہی ہفتے مہنگائی کے اثرات نمودار ہونا شروع ہوگئے ہیں اور بجٹ کے بعد پہلے ہی ہفتے ملک میں مہنگائی شرح میں 0.04 فیصد اضافہ ہوا ہے اور اس ایک ہفتے کے دوران ملک میں آلو دو روپے، دودھ ایک روپے لیٹر مہنگا ہو گیا ہے۔میڈیارپورٹ کے مطابق اس ضمن میں وفاقی ادارہ شماریات کے اعدادوشمارمیں بتایاگیا ہے کہ چینی، ایل پی جی، دال چنا، بکرے اور گائے کے گوشت سمیت 19 اشیا کی قیمتوں میں اضافہ ہوا۔ وفاقی ادارہ شماریات کی طرف سے جاری کردہ اعدادوشمار میں بتایا گیا ہے کہ پانچ جون کو ختم ہونے والے ہفتے کے دوران ملک بھر میں گزشتہ ہفتے کے دوران حساس قیمتوں کے اشاریے کے لحاظ سے مہنگائی(افراط زر)کی شرح میں 0.04 فیصد اضافہ ہوا ہے تاہم آٹھ ہزارروپے ماہانہ تک آمدنی رکھنے والے طبقے کیلیے گزشتہ ہفتے کے دوران حساس قیمتوں کے اشاریے کے لحاظ سے مہنگائی(افراط زر)کی شرح میں سب سے کم اضافہ ہوا جو کہ 0.03 فیصد ہے جبکہ آٹھ ہزار ایک روپے ماہانہ سے زائد آمدنی رکھنے والے تمام طبقات کیلیے مہنگائی کی شرح میں 0.04 فیصد اضافہ ہوا ہے۔وفاقی ادارہ شماریات کی طرف سے جاری کردہ اعدادوشمار میں بتایا گیا ہے کہ ملک میں پانچ جون 2013کو ختم ہونے والے ہفتے کے دوران ا±نیس اشیائے ضروریہ کی قیمتوں میں اضافہ اور بارہ اشیائے ضروریہ کی قیمتوںمیں کمی واقع ہوئی جبکہ بائیس اشیائے ضروریہ کی قیمتیں مستحکم رہی ہیں۔ گزشتہ ہفتے کے دوران ملک بھر میں جن 19اشیائے ضروریہ کی قیمتوں میں اضافہ ہوا ہے ان میں دودھ،چینی، ایل پی جی، دال چنا،آلو،س±رخ مرچ،دال ماش،انڈے،ویجی ٹیبل گھی، بکرے اور گائے کے گوشت سمیت دیگر اشیائے ضروریہ شامل ہیں جبکہ جن 12 اشیائے ضروریہ کی قیمتوں میں کمی ہوئی ان میںٹماٹر،پیاز،دال مسور،دال مونگ،زندہ چکن، لہسن، گندم اورآٹے سمیت دیگر اشیائے ضروریہ شامل ہیں اس کے علاوہ 22 اشیائے ضروریہ کی قیمتیں مستحکم رہی ہیں۔

مزید :

کامرس -