کاروباری رنجش کا شکار محمد منظور گیارہ افراد کا واحد کفیل تھا

کاروباری رنجش کا شکار محمد منظور گیارہ افراد کا واحد کفیل تھا

  

لاہور(کرائم سیل)داروغہ والہ میں کاروباری رنجش کا شکار ہونے والا محمد منظور گیارہ افراد پر مشتمل خاندان کا واحد کفیل اورمسلم لیگ ن کا سرگرم کارکن تھا،ا س کے قتل نے پورے خاندان کا معاشی قتل کر دیا ہے۔مقتول کے دو بھائی محمد ظفر اور سجاد احمد ابھی تعلیم حاصل کر رہے ہیں اس قتل سے ان کا تعلیمی مستقبل اندھیروں میں ڈوب گیا ہے۔مقتول کی بیوہ نے کہا کہ ہمیں پولیس سے انصاف کی کوئی امید نہیں ہے کیونکہ چار سال قبل قتل ہونے والے بھائی جاوید کے قاتلوں کو ابھی تک سزا نہیں مل سکی ہے۔ مقتول کے بیٹے ندیم اور عظیم نے کہا کہ ہمارے باپ کے قاتلوں کو جلد از جلد پکڑکر سزا دی جائے۔ ہمسایہ سجاد نے کہا کہ مقتول نہایت ہنس مکھ شخص تھا اور اس کے قاتلوں کو قرار واقعی سزا ملنی چاہیئے۔

مقتول کے دوست محمد شہباز،محمد جاوید اور حامد علی نے کہا کہ یہاں انصاف پیسوں سے ملتا ہے لیکن مقتول کی فیملی کے پاس پیروی کرنے کے لیئے بھی پیسے نہیں ہیں اعلی ٰحکام سے اپیل ہے کہ انصاف فراہم کیا جائے۔

مزید :

علاقائی -