بھارت ٗقبائلی جوڑے کی جانب سے مبینہ طور پر غربت و افلاس کے سبب اپنے نوزائیدہ بچے کو فروخت کرنے کا انکشاف

بھارت ٗقبائلی جوڑے کی جانب سے مبینہ طور پر غربت و افلاس کے سبب اپنے نوزائیدہ ...

  



نئی دہلی (این این آئی)بھارت کی شمال مشرقی ریاست تریپورہ میں ایک قبائلی جوڑے کی جانب سے مبینہ طور پر غربت و افلاس کے سبب اپنے نوزائیدہ بچے کو فروخت کرنے کا معاملہ سامنے آیا ہے۔میڈیا رپورٹ کے مطابق تریپورہ کے یووائی سب ڈویژن کی منڈا بستی گاؤں کے باسی رنجیت تانتی نے اپنے چوتھے بچے کو اس کی پیدائش کے صرف ایک دن بعد محض 4500 روپے میں فروخت کر دیا۔رنجیت نے بتایا کہ جب میری بیوی تین ماہ کے حمل سے تھی تو ہم نے ڈاکٹر سے اسقاط حمل کے لیے رابطہ کیا۔ لیکن چند گاؤں والوں کو اس کا علم ہو گیا اور انھوں نے ہمیں ایسا کرنے سے منع کر دیا۔

رنجیت کے مطابق گاؤں والوں نے کہا کہ وہ ایسے آدمی کا پتہ چلائیں گے جو بچے کو لے لے گا اور اسے ایک بہتر زندگی دیگا اس طرح وہ بچہ لینے میں دلچسپی رکھنے والوں کے رابطے میں آئے اور آخر کار دو جون کو انھوں نے اپنے بچے کو فروخت کر دیا۔رنجیت نے بتایا کہ ہم نے بچہ سونپ دیا۔ جنھوں نے میرا بچہ لیا وہ بہت خوش تھے۔ انہوں نے مجھے 4500 روپے بھی دئیے۔سوبیر بھومک نے بتایا کہ اپنے نوزائیدہ بچے کو فروخت کرنے پر رنجیت کو کوئی دکھ نہیں ہے۔وہ کہتے ہیں: ’مجھے برا نہیں لگ رہا ہے۔ میں خوش ہوں کیونکہ مجھے معلوم ہے کہ ہم اس کی پرورش نہیں کر پاتے۔ وہ ایک امیر خاندان میں چلا گیا ہے جہاں وہ بہتر زندگی بسر کرے گا۔ ہمیں امید ہے کہ اس کے پاس اپنی گاڑی اور گھر ہو گا۔بچے کی ماں سیما تانتی نے کہاکہ کہ ان کیلئے پانچ لوگوں کا خاندان چلانا ناممکن تھا اس لیے انھوں نے اپنے نوزائیدہ بچے دے دیا۔سیما نے بتایاکہ ہمارے پہلے سے ہی تین بچے ہیں، چوتھے کو ہم کسی طرح سنبھال نہیں پاتے۔

مزید : عالمی منظر


loading...