کے پی کے میں دہشتگردوں کیخلاف کارروائی کیلئے ضابطہ فوجداری 1898 کے تحت پبلک نوٹس جاری

کے پی کے میں دہشتگردوں کیخلاف کارروائی کیلئے ضابطہ فوجداری 1898 کے تحت پبلک ...

  



 ڈیرہ اسماعیل خان(اے این این) خیبر پختون خوا کی صوبائی حکومت نے دہشت گردی میں ملوث افراد کے خلاف گھیرا تنگ کرنے کیلئے ضابطہ فوجداری 1898ء کے تحت پبلک نوٹس جاری کردیا ہے جس کے تحت دہشت گردی میں ملوث افراد کے بارے میں نزدیکی تھانہ یا اے پی اے کے دفتر میں رپورٹ بمعہ تصویر جمع نہ کرانے والے پورے خاندان کے خلاف کارروائی کا اعلان کیا گیا ہے۔کے پی کے حکومت کی جانب سے جاری پبلک نوٹس میں کہا گیا ہے کہ کسی بھی گھرانے کا کوئی فرد یا افراد جن میں زیر کفالت غیر رشتہ دار بھی شامل ہیں کسی بھی دہشت گرد کارروائی میں چاہے وہ انفرادی حیثیت میں ہو یا کسی تنظیم کے رکن کے طور پر ملوث ہو یا ملوث ہونے کا خدشہ ہو اور اس مقصد کیلئے اپنے گھروں سے غائب ہیں توان کے متعلق اپنے نزدیکی تھانے یا اسٹنٹ پولیٹکیل ایجنٹ کے دفتر میں اس کی تفصیلات بمعہ تصویر رپورٹ کی جائے بصورت دیگر اگر کوئی دہشت گرد کسی بھی واردات بشمول خودکش حملہ میں ملوث ہو کو گرفتار کیا گیا یا ہلاک کیا گیا تو ان کے والدین اور متعلقہ رشتہ دار جن کا وہ کفیل یا زیر کفالت رہا ہو کے خلاف دہشتگردی سے متعلق قوانین کی انہی دفعات کے تحت کارروائی ہوگی جن کی سزاؤں میں پھانسی ٗ عمر قید اور منقولہ جائیداد کی ضبطگی شامل ہیں ۔ کے پی کے حکومت نے عوام کو آگاہ کیا ہے کہ کسی خاندان کا کوئی بھی فرد لاپتہ ہوجائے تو پولیس اور پولیٹیکل ایجنٹ کو آگاہ کیا جائے اگر لاپتہ شخص دہشت گردی کے واقعہ میں پکڑا یا مارا گیا تو اس کے خاندان پر بھی ذمہ داری عائد ہوگی عوام کو خبردار کیا گیا ہے کہ خودکش حملوں اور دہشت گردی میں ملوث افراد اگر گھروں سے لاپتہ ہوں اور اس کی اطلاع نہ دی گئی تو خاندان کے سربراہ یا سرپرست کے خلاف کارروائی کی جائے گی ۔

مزید : صفحہ اول