ری الیکشن والوں کو سبق سکھائیں گے ‘ خیبرپختونخوا میں دوبارہ بلدیاتی انتخابات ’’ گڈی گڈے ‘‘ کا کھیل نہیں

ری الیکشن والوں کو سبق سکھائیں گے ‘ خیبرپختونخوا میں دوبارہ بلدیاتی ...

  



 اسلام آباد(اے این این) چیف الیکشن کمشنر جسٹس(ر) سردار محمد رضا خان نے خیبر پختونخوا میں ری الیکشن کے بیانات پر شدید رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ صوبے میں دوبارہ بلدیاتی انتخابات ’’گڈی گڈے‘‘ کا کھیل نہیں،جو کرنا ہوا ہم کرینگے،ری الیکشن والوں کو سبق سکھائیں گے،ہماری نوکری کسی خٹک،سید یا بنگش کے ہاتھ میں نہیں،پولنگ کے روز پولیس کسی اور کے ہاتھ میں کھیل رہی تھی،الیکشن کمیشن کا ساتھ نہیں دیا،امن و امان کی صورتحال پر بھی توجہ نہیں دی گئی۔ان خیالات کا اظہار انھوں نے خیبر پختون خوا کے بلدیاتی الیکشن میں مبینہ دھاندلی سے متعلق کیس کی سماعت کے دوران ریمارکس دیتے ہوئے کیا۔دوران سماعت نوشہرہ میں بلدیاتی انتخابات کے دوران بے ضابطگیوں کا جائزہ لیا گیا۔اس موقع پر وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا پرویز خٹک کے بھائی لیاقت خٹک ڈی سی او اور ڈی پی او نوشہرہ بھی پیش ہوئے۔لیاقت خٹک کے خلاف لیکشن کمیشن نے انتخابی عمل میں اثرانداز ہونے کی شکایت دائر کی گئی ہے۔ سماعت کے دوران جسٹس(ر) سردار رضا نے صوبے میں دوبارہ انتخابات کرائے جانے کے بیان پر شدید برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ خیبر پختونخوا میں دوبارہ الیکشن گڈی گڈے کا کھیل نہیں جو کرناہوا وہ ہم کریں گے۔ الیکشن کمیشن فیصلہ کرے گا کہ دوبارہ الیکشن کرانے ہیں یا نہیں۔ ری الیکشن کی بات کرنے والوں کا علاج کرینگے۔ہماری نوکری کسی خٹک،سید یا بنگش کے ہاتھ میں نہیں،اللہ کے ہاتھ میں ہے۔انھوں نے کہا کہ الیکشن کے روز پولیس انتظامیہ کے کنٹرول میں تھی جس نے الیکشن کمیشن کا ساتھ نہیں دیا جب کہ انتظامیہ کی جانب سے صوبے بھر میں امن وامان کی صورتحال پر توجہ نہیں دی گئی ۔ جس دن خیبرپختونخوا میں بلدیاتی الیکشن ہوئے وہاں کی پولیس کی آنکھیں بند تھیں ۔ انتخاب کے دن پورے صوبے میں امن و امان کی صورتحال کنٹرول میں نہیں تھی۔کے پی پولیس پولنگ عملے کا ساتھ دینے کی بجائے کسی اور کے ہاتھوں میں کھیلتی رہی جبکہ سندھ کے حلقہ این اے 246 کے ضمنی الیکشن میں وہاں کی پولیس نے اچھی کارکردگی دکھائی اور الیکشن کمیشن کا ساتھ دیا نہوں نے کہا کہ کے پی پولیس پر فخر ہے لیکن بلدیاتی الیکشن میں پولیس نے الیکشن کمیشن کا ساتھ نہیں دیا ۔

اسلام آباد(اے این این) تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان نے ایک بار پھر پارلیمنٹ کے بائیکاٹ کا اعلان کرتے ہوئے کہا ہے کہ ہمیں پارلیمنٹ میں جانا ہی نہیں تھا یمن کے مسئلے پر گئے تھے،جب جوڈیشل کمیشن نے اسمبلی کو جائزقرار دیا تب ایوان میں جاؤں گاورنہ نہیں،الیکشن کو کبھی گڈی گڈے کا کھیل نہیں سمجھا،بلدیاتی الیکشن میں سب کہہ رہے ہیں دھاندلی ہوئی تو اس کا حل نئے الیکشن میں ہے، گلگت بلتستان میں مسلم لیگ( ن) کے پہلے سے امپائرکھڑے تھے، پیپلزپارٹی اے این پی اورجے یوآئی منافقت کررہی ہیں اسی لئے نوازشریف کے ساتھ ہیں ،لگتا ہے کہ پنجاب میں بلدیاتی الیکشن سے قبل عام انتخابات ہو جائیں گے۔پیپلزپارٹی لودھراں کے چارسابق ایم پی اے کی تحریک انصاف میں شمولیت کے موقع پراسلام آباد میں میڈیاسے گفتگو کرتے ہوئے عمران خان نے کہاکہ مسلم لیگ (ن)نے گلگت بلتستان میں انتخابات سے قبل ہی اپنے امپائرز کھڑے کر دئیے47 ارب روپے کے ترقیاتی پیکیج کا اعلان بھی پر ی پول رگنگ ہے ،بے نظیرانکم سپورٹس پروگرام کے نام پرلوگوں سے پرچیاں وصول کرکے پیسے بانٹے گئے،پری پول رگنگ اور کسے کہتے ہیں، اس کے باوجود دو نشستیں پی ٹی آئی نے جیتیں جبکہ دو کا نتیجہ روک دیا گیا ہے۔تحریک انصاف نے انتخابات میں دھاندلی سے متعلق الیکشن کمیشن کو تفصیلات فراہم کردی ہیں، تحریک انصاف نے گزشتہ عام انتخابات میں دھاندلی سے متعلق تمام ثبوت جوڈیشل کمیشن میں اپنے وکیل کو دیئے ہوئے ہیں، انہیں پتا ہے کہ کون سے شواہد کب سامنے لانے ہیں؟ موجودہ پارلیمنٹ ایک ڈمی پارلیمنٹ قرار دیتے ہوئے عمران خان نے کہا کہ جوڈیشل کمیشن کے فیصلے تک انہیں قومی اسمبلی نہیں جانا تھا یمن بحران نہ ہوتا تو وہ کبھی پارلیمنٹ نہ جاتے اب بھی اگر جوڈیشل کمیشن گزشتہ انتخابات کو شفاف قرار دے گا تب ہی پارلیمنٹ جائیں گے۔ انہوں نے کہا کہ ملک میں تحریک انصاف کی مقبولیت میں اضافہ ہورہا ہے۔ ہمیں وہاں بھی پذیرائی مل رہی ہے جہاں 2013 کے انتخابات میں نہیں ملی تھی جس کی مثال منڈی بہاالدین میں قومی اسمبلی کا ضمنی انتخاب ہے۔عمرا ن خان نے کہاکہ انہوں نے کبھی یہ نہیں کہا کہ بلدیاتی انتخابات کا انعقاد گڈے گڈی کا کھیل ہے، خیبرپختونخوا میں بلدیاتی انتخابات کرانا آسان کام نہیں تھا لیکن ہم انتخابات کرائے اوراب سب کہہ رہے ہیں کہ بلدیاتی انتخابات میں دھاندلی ہوئی توہم دوبارہ الیکشن کرانے کیلئے تیارہیں،مگریہی جماعتیں نہیں مان رہیں انہیں ڈرہے ہم شکست کھائیں گے ۔ایک سوال پرانہوں نے کہاکہ صوبے میں جب دوبارہ بلدیاتی انتخابات کیلئے تیار ہیں تو استعفے کیوں دیں۔انہوں نے امید ظاہر کی کہ پنجاب میں بلدیاتی انتخاب سے قبل عام انتخابات ہو جائیں گے۔اس موقع پرلودھراں سے تعلق رکھنے والے پیپلز پارٹی کے سابق ایم پی ایزشفیق آرائین،رفیق آرائیں، اعجاز لون اورمحمد فراز نے تحریک انصاف میں شمولیت کا اعلان کیا۔

مزید : صفحہ اول