شدید گرمی میں بجلی کی بد ترین لوڈ شیڈنگ ،شہری بلبلا اُٹھے ،پانی کی بھی قلت

شدید گرمی میں بجلی کی بد ترین لوڈ شیڈنگ ،شہری بلبلا اُٹھے ،پانی کی بھی قلت

  



لاہور (کامرس رپورٹر) ملک میں گرمی کی شدت میں اضافہ ہوتے ہی بد ترین لوڈ شیڈنگ کا سلسلہ شروع ہو گیا ۔ جھلسا دینے والی شدید گرمی میں بار بار ہونے والی لوڈ شیڈنگ نے معمولات زندگی معطل کرکے رکھ دیئے ۔ بجلی کی ڈیمانڈ میں اضافہ کے باعث شارٹ فال مزید بڑھ گیا جس سے لوڈ شیڈنگ کے دورانیہ میں مزید اضافہ کر دیا گیا ۔بجلی کی طلب میں اضافہ کے بعد لیسکو کے معاملات بے قابو ہو گئے ہیں گزشتہ روز تھرڈ سرکل میں متعدد فیڈر صبح 8 بجے سے دوپہر 4 تک بند رہے جس سے ہربنس پورہ، نواب پورہ، رانی پنڈ، فتح گڑھ، لال پل، مغل پورہ، صدر بازار اور دھرم پورہ سمیت ایک بڑا علاقہ مسلسل 8 گھنٹے تک تاریکی میں ڈوبا رہا، بجلی کی طویل بندش کے بعد پانی کی بھی قلت ہو گئی اور 43 ڈگری درجہ حرارت میں ان علاقوں کے شہریوں نے سارا دن شدید عذاب میں گزار ا۔دوسری جانب شہروں میں بھی ایک گھنٹے کے بعد دو دو گھنٹے کی لوڈ شیڈنگ شروع کر دی گئی ۔ شارٹ فال میں اضافہ کے باوجود بھی انڈسٹریز کو بجلی کی بلا تعطل سپلائی جاری رکھی گئی ۔ شارٹ فال کا تمام بوجھ گھریلو اور عام صارفین کو برداشت کرنا پڑا ۔ بار بار لوڈ شیڈنگ کے باعث بیشتر علاقوں میں پانی کی بھی شدید قلت ہو گئی ۔ مرمت کے نام پر بھی بجلی کی بندش کا سلسلہ بڑھا دیا گیا تمام سب ڈویژنوں میں دو کے بجائے تین تین فیڈرز بند رکھے گئے ۔ گرمی کی شدت میں اضافہ کے باعث ڈیمانڈ بیس ہزار میگا واٹ سے بھی تجاوز کر گئی جس کی وجہ سے شارٹ فال ساڑھے چھ ہزار سے بھی بڑھ گیا ۔ گزشتہ روز شہروں میں چودہ گھنٹے جبکہ دیہی علاقوں میں بیس گھنٹے تک کی لوڈ شیڈنگ کی گئی ۔ رات کو بھی ہر گھنٹے بعد لوڈ شیڈنگ کی گئی جس سے غریب لوگوں رات کو دو گھنٹے بھی مسلسل نہیں سو سکے ۔ انرجی مینجمنٹ سیل کے ذرائع کے مطابق گزشتہ روز بجلی کی مجموعی ڈیمانڈ 20130 میگا واٹ جبکہ پیداوار 13510 میگا واٹ رہی طلب و رسد میں 6620 میگا واٹ کا فرق رہا ۔

لوڈشیڈنگ

مزید : صفحہ آخر


loading...