مجھ سے شادی کرلو یا غلام بننے کی تیاری کرلو

مجھ سے شادی کرلو یا غلام بننے کی تیاری کرلو
مجھ سے شادی کرلو یا غلام بننے کی تیاری کرلو

  



لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) شام میں داعش کے غلبے کے بعدشامی باشندوں پر جو ظلم ہورہے ہیں سو ہو رہے ہیں لیکن شامی خواتین پر تو گویا قیامت ٹوٹ پڑی ہے۔ داعش کے شدت پسند خواتین سے جبری شادیاں کر رہے ہیں اور جو شادی پر رضامند نہ ہو اس کو ”باندی“ بنا لیا جاتا ہے۔ ایسی ہی ایک شامی خاتون نے اپنی کہانی سنائی ہے جس کا شوہر شامی فوج کی طرف سے لڑتے ہوئے جاں بحق ہو گیا تھا۔ 37سالہ شورکانا علوی پرائمری سکول ٹیچر تھی اور خوشگوار ازدواجی زندگی گزار رہی تھی، اس کا ایک چھوٹا سا بیٹا تھا۔ پھر ایک دن اس کے شوہر نے داعش کے خلاف لڑنے کے لیے شامی فوج میں شمولیت اختیار کر لی اور دو ہفتے بعد جنگ میں جاں بحق ہو گیا۔ شوہر کے مرنے کے بعد شورکانا اپنے معصوم بچے کے ہمراہ بے آسرا رہ گئی۔

داعش کے مقامی امیر نے اسے پیغام بھیجا کہ ”مجھ سے شادی کر لو یاپھر میری باندی بننے کے لیے تیار ہو جاﺅ۔“شورکانا نے داعش کے امیر سے شادی سے دو دن قبل شام سے راہ فرار اختیار کی اور ترکی میں داخل ہو گئی اور آج کل ترکی کے شہر عرفہ میں ایک کمرے کے گھر میں کسمپرسی کی زندگی گزار رہی ہے۔ شورکا کا کہنا تھا کہ مجھ سے 10سال چھوٹے داعش کے امیر نے میری ہمسائی کے ہاتھ متعدد بار رشتہ بھیجا لیکن میں نے ہر بار انکار کر دیا۔ لیکن جب شہر پر داعش کامکمل قبضہ ہو گیا تو اس مقامی امیر نے میرے دروازے پر آ کر دستک دی، میں دروازے پر گئی تو اس نے کہا کہ دو دن میں مجھ سے شادی کر لو ورنہ میری باندی بننے کے لیے تیار ہو جاﺅ۔اب میں بے بس ہو گئی تھی اور میرے پاس عزت بچانے کے لیے وہاں سے بھاگنے کے سوا کوئی راستہ نہ بچا تھا۔ شورکانا نے کہا کہ ترکی آنے کے بعد اب تک میں بیروزگار ہوں اور گھر میں صرف اپنے بیٹے کو ہی پڑھاتی ہوں، لیکن میں پرامید ہوں کہ مجھے جلد کسی سکول میں نوکری مل جائے گی، میں اپنے بیٹے کے حوالے سے بہت متفکر ہوں ، معلوم نہیں میں اسے کیسا مستقبل دے پاﺅں گی۔

مزید : ڈیلی بائیٹس


loading...