عمران خان نے خیبرپختونخوا کے وسائل پر نتھیا گلی کو اپنا مستقل مسکن بنا لیا:امیر مقام

عمران خان نے خیبرپختونخوا کے وسائل پر نتھیا گلی کو اپنا مستقل مسکن بنا ...

پشاور( سٹاف رپورٹر )وزیراعظم کے مشیرو پاکستان مسلم لیگ(ن)خیبرپختونخواکے صوبائی صدرانجینئرامیرمقام نے کہاکہ وزیراعظم کی بیٹی پراپنے باپ کیساتھ رہنے پراعتراض کرنیوالے عمران خان نے کس منہ سے خیبرپختونخواکے وسائل پرکے پی ہاؤس نتھیاگلی کواپنامستقل مسکن بنالیا ہے،عوامی وسائل پرکبھی میٹنگ اور کرکٹ توکبھی سورج چھڑے افطاری سے محظوظ ہوتے رہتے ہیں، سرکاری ریسٹ ہاؤسزعوام کیلئے کھولنے کے نام نہاد دعویداروں نے اپنی قول وفعل کی دھجیاں اڑادی ہے اورسرکاری ریسٹ ہاوسزعوام کیلئے مقفل کردیئے گئے ہیں۔انہوں نے کہاکہ ٹیکس فری بجٹ پیش کرنے والوں نے عوام پرٹیکس کی تاریخی بم گرادیئے ہیں،ٹیکس میں درزیوں،پکوڑے بھیجنے والوں اور میڈیکل سٹورز کوبھی معاف نہیں کیاگیاجس کا بلاواسطہ اثرات اورمضمرات عوام پرپڑتے ہے،یہ بجٹ ٹیکس فری نہیں بلکہ ٹیکس ٹری بجٹ تھا۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے واپڈا ہاؤس پشاورمیں پریس کانفرنس سے خطاب کرت ہوئے کیا۔اس موقع پرصوبائی اسمبلی میں پاکستان مسلم لیگ(ن) پارلیمانی لیڈراور نگزیب نلوٹااورصوبائی سیکرٹری اطلاعات ناصرموسیٰ زئی بھی موجودتھے۔وزیراعظم کے مشیرانجینئرامیرمقام نے کہاکہ کچکول تھوڑنے والوں کے نام نہاددعویدار 126ارب روپے کے صوبائی ترقیاتی پروگرام میں82ارب روپے بیرونی امداداورقرضے لیں گے جبکہ پرگرام کے تحت مختلف منصوبوں پرعملدرآمدکیلئے10ارب روپے مقامی قرضہ لیں گے، عمران خان کوچاہئے کہ جتنی چادرہواتنے پھیرپھیلائیں۔انہوں نے کہاکہ کاکردگی کی بدولت آئندہ انتخابات میں بھی بھاری اکثریت سے کامیاب ہوں گے،عوام کی عدالت2018میں کاکردگی کی بنیادپرفیصلہ دے گی۔انجینئرامیرمقام نے کہاکہ وزیراعلیٰ صاحب کہتے ہیں کہ واپڈاہمارے حوالے کردیاجائے مگراس سے قبل وہ عوام کو خیبرپختونخوا میں بھی اداروں کی حالت زارسے آگاہ کریں،ڈی جی احتساب کمیشن کااستعفیٰ،خیبربینک لیکس،شکیل درانی کااستعفیٰ، پیڈو لیکس آج بھی تحریک انصاف کیلئے سوالیہ نشان ہیں۔انہوں نے کہاکہ2013میں پوراصوبہ تووزیراعلیٰ صاحب کے حوالے کیاگیاتھااور18ویں ترمیم کے تحت وہ باختیاربھی تھے،مگرصوبائی حکومت نے کارکردگی دکھانے اوراصلاحات لانے کی بجائے اپناوقت محض دھرنوں اورالزام تراشیوں میں ضائع کردیا۔انہوں نے کہاکہ عمران خان نے کہاکہ اپنے دورحکومت میں صوبے کے بجلی پیداوارمیں خودکفیل بناکراضافی بجلی دوسرے صوبوں کو بیچاکریں گے مگرشعبہ توانائی کیلئے6.298ملین مختص کئے گئے تھے جس میں7.23ملین روپے جاری کئے گئے مگر اس میں بھی صرف 2ملین ہی خرچ ہوسکے یعنی اتنے اہم شعبہ کے بجٹ کاصرف 1فیصدبجٹ خرچ ہوسکا۔وزیراعظم کے مشیرانجینئرامیرمقام نے ایک سوال کے جواب میں کہاکہ شریف فیملی نے ایک تاریخ رقم کردی اورحساب دینے کیلئے باقاعدہ پیش ہوتے رہے۔انہوں نے کہاکہ آف شورکمپنیاں دیگرسینکڑوں افرادکی بھی ہیں،لندن میں سینکڑوں پاکستانیوں کی فلیٹس اور بنگلے ہیں جبکہ آف شورکمپنی اورفلیٹس پرمحض شریف خاندان کااحتساب کیاجارہاہے۔

مزید : کراچی صفحہ اول