محمد بن قاسم کی آمد سے سندھ باب الاسلام بنا ،مولانا عبدالرحمن سلفی

محمد بن قاسم کی آمد سے سندھ باب الاسلام بنا ،مولانا عبدالرحمن سلفی

کراچی(اسٹاف رپورٹر)امیر جماعت غرباء اہلحدیث مولانا عبدالرحمن سلفی نے کہا ہے کہ عظیم فاتح و مجاہد محمد بن قاسم کے آنے سے سندھ کو باب الاسلام کہلانا کا شرف حاصل ہوا جس نے یہاں کے باشندوں کو راجہ داہر اور اس کے کارندوں کے ظلم و ستم سے نجات دلائی اور بحری قذاقوں سے مسلم خواتین کوآزاد کرایا جس کے باعث سندھ کے مظلوم باشندے محمد بن قاسم کو اپنا نجات دہندہ قرار دیتے تھے۔ آج اسلام کی سربلندی و ظلم کے خاتمہ کے لئے محمد بن قاسم جیسے مجاہد کی ضرورت ہے تاکہ مسلمانوں کو استحصار و کفر کی غلامی و ظلم سے نجات دلائی جاسکے۔ وہ مرکز ی آفس پر ’’سندھ باب الاسلام ‘‘ کے موضوع پر ایک سیمینار سے خطاب کررہے تھے۔ مولانا سلفی نے مزید کہا کہ اسلام انسانیت کے لئے ایک روشن دین ہے جو انسان کو انسان کی غلامی و استحصال سے نجات دلاتا ہے اور مظلوم کا حامی ہے معاشرہ میں کمزور کو حقوق دلانے اور عدل و انصاف کی فراہمی کے لئے ہمیں اسلام کے قوانین کو نافذ کرنا ہوگا ۔محمد بن قاسم نے ہندوؤں کو ظلم سے نجات دلاکر ثابت کیا کہ اسلام ہی بلا امتیاز مذہب و ملت ہر کمزور و مظلوم کو حقوق دلانے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ محمد بن قاسم کے کردار سے متاثر ہوکر ہندوؤں نے اس کا مجسمہ بنایا ۔سندھ کے باشندوں پر اسلام کا یہ احسان ہے کہ انہیں اسلام کے زریں اصول حکمرانی سے آگاہ کیااور محمد بن قاسم کے ذریعہ ایک مثالی حکومت قائم کی ہے آج بھی ہمیں حکمرانی کے لئے انہی اسلامی اصولوں پر عمل کرنے کی ضرورت ہے۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر