راجن پور :علاقہ پچھادھ میں نہری پانی کا بحران ،فصلیں خشک صورتحال سنگین ،کسانوں کا حتجاج

  راجن پور :علاقہ پچھادھ میں نہری پانی کا بحران ،فصلیں خشک صورتحال سنگین ...

  

راجن پور (ڈسٹرکٹ رپورٹر) راجن پور کے علاقہ پچادھ میں نہری پانی کی شدید قلت کے فصلوں کی کاشت کاموسم گذرنے کے ساتھ ساتھ زیرزمین پانی کڑوا ہونے کی وجہ سے انسان اور مویشی پانی کو ترس گئے ۔ ،داجل کینال میں پانی ہونے کے باوجود غیرقانونی لفٹ پمپوں سے پانی چوری ہونے لگا پانی کاایک کنستر پانچ سوروپے میں فروخت ہونے لگافتح پورڈسٹری کے کسانوںنے کا ہیڈ بکھر پور پراحتجاج ، صو بائی وزیر آبپاشی سردار(بقیہ نمبر43صفحہ7پر )

 محسن لغاری نے کسا نوں کے احتجاج کے پیش نظر ہیڈ بکھر پور کادورہ ملتوی کردیا اور قادرہ کریک پر چلے گئے تفصیلات کے مطا بق فتح پورکے رہائشیوں رحمت اللہ شلوانی ، محمدنواز سہرانی ، محمد حسین سہرانی، سابق چیئر مین یونین کونسل فتح پور وصدر کسان بورڈ جلب خان گبول، محمد علی سمیت دیگر درجنوں کسانوں نے احتجاج کرتے ہوئے بتایا کہ محکمہ انہار کے افسروں نے من پسند زمینداروں کے علاقوں کی نہروں کوبلاتعطل نہری پانی کی فراہمی جاری رکھی ہوئی ہے جبکہ زیرزمین کڑوے پانی والے علاقوں کی نہروں فتح پورڈسٹری ، نوردھندی ودیگر میں وارہ بندی شیڈول کے باوجود اُنہیں پانی فراہم نہیں کیا جارہا اس طرح کئی موگہ جات اوورسائز تعمیر کرکے اور کہیں ڈبل موگے تعمیر کرکے زمینداروں کوپانی چوری میں مدد فراہم کررہے ہیں اس طرح اپنے من پسند زمینداروں کو لفٹ پمپوں کے ذریعہ پانی چوری کی کھلی چھوٹ دے رکھی ہے جس کانتیجہ یہ ہے کہ داجل کینال میں پانی کے باوجود ٹیل کے کسان پانی کی بوند بوند کوترس رہے ہیں ان کا مزید کہنا تھا کہ بھل صفائی کے نام پر محکمہ کے آفیسران فرضی بل بنا کر کھارہے ہیں نہروں کی بھل صفائی نہ ہونے سے نہری پانی کی روانی بھی متاثر ہورہی ہے کسانوں نے ایس ڈی اوعبدالشکور پرالزا م عائد کیا کہ نہ وہ فون سنتا ہے اور نہ ہی کسانوں کے مسائل کی طرف توجہ دیتا ہے اس لئے اُسے بھی اس ڈویژن سے فوری تبدیل کر نے کا مطا لبہ کیا ہے دوسری جانب صوبائی وزیرآبپاشی سردار محسن لغاری نے چیف انجینئر انہار ڈی جی خان اور دیگر آفیسران کے ہمراہ ہیڈ بکھر پور کادورہ کرنا تھا مگر کسانوں کے احتجاج کے پیش نظر وہ ہیڈ بکھر پور کی بجائے قادرہ کریک پر چلے گئے جس پر کسانوں نے مایوسی کااظہار کیا کسانوں نے وزیراعظم پاکستان اور وزیراعلیٰ پنجاب سے نوٹس لینے کا مطا لبہ کیا ہے ۔

مزید :

ملتان صفحہ آخر -