شہباز شریف کی وطن واپسی، شاندار استقبال، والدہ، مریم سے ملاقاتیں، مسلم لیگ (ن) کامشترکہ پارلیمانی اجلاس آج طلب

شہباز شریف کی وطن واپسی، شاندار استقبال، والدہ، مریم سے ملاقاتیں، مسلم لیگ ...

لاہور،اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں) قومی اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر اور مسلم لیگ (ن) کے صدر شہباز شریف برطانیہ میں دوماہ کے قیام بعد پاکستان واپس پہنچ گئے،والدہ شمیم بیگم،مر کزی نائب صدر اور بھتیجی مر یم نواز سمیت پارٹی رہنما امیرمقام سے رائے ونڈ میں ملاقات کی جبکہ پولیس اور ایئر پورٹ سکیورٹی کے سخت ترین انتظامات کے باوجود کارکن لاؤنج تک پہنچنے میں کامیاب رہے،جنہوں نے اراکین پار لیمنٹ کیساتھ لاہور ایئر پورٹ پر شاندار استقبال کیا،پھولوں کی پتیاں اور نوٹ بھی نچھاور کئے گئے،دریں اثناء شہبا زشر یف نے ن لیگ کی مشترکہ پار لیمانی پارٹی کا اجلاس آج دوپہر اڑھائی بجے پارلیمنٹ ہاؤس میں اپوزیشن چیمبر میں طلب کر لیا ہے۔تفصیلات کے مطابق شہبا زشر یف اتوار کی صبح پی کے 758کے ذریعے لاہور کے علامہ اقبال انٹرنیشنل ایئرپورٹ پہنچے جہاں (ن) لیگ کے سیکریٹری احسن اقبال، امیر مقام، پرویز ملک، خواجہ عمران نذیر،میاں مرغوب، مجتبیٰ شجاع الرحمان‘حنا پرویز بٹ‘ بلال یاسین، عظمی بخاری، راحیلہ خادم، شائستہ پرویز، علی پرویز،میا ں عثمان، وحید عالم خان، چوہدری شہباز، غزالہ سلیم بٹ، ملک سیف الملوک، عطااللہ تارڑ،عائشہ غوث پاشا سمیت دیگر رہنما کارکنوں کے ہمراہ پارٹی صدر شہباز شریف کا استقبال کیا، گلو بٹ کی قیادت میں لیگی کارکنان وقفے وقفے سے اپنی قیادت کے حق میں اور حکومت کیخلا ف نعرے لگاتے رہے۔ شہباز شریف کی وطن واپسی کے موقع پر کارکنوں کی بڑی تعداد میں متوقع آمد کے پیش نظر ائیر پورٹ پر سکیورٹی کے انتہائی سخت انتظامات کئے گئے تھے تاہم اس کے باوجود کچھ کارکنان ایئرپورٹ سکیورٹی فورس کا حصار توڑ کر اور دھکم پیل کرتے ہوئے ایئر پورٹ کے آرائیول لاؤئج تک پہنچ گئے، اس دوران کارکنان اور ائیر پورٹ سکیورٹی کے درمیان تلخ کلامی بھی ہوتی رہی۔شہباز شریف کے استقبال کیلئے آنیوا لے لیگی کارکنوں سے نمٹنے کیلئے واٹر کینن بھی منگوائی گئی تھی جبکہ اینٹی رائٹ فورس کے دستے بھی تعینات کئے گئے تھے۔ پارٹی صدر کی وطن واپسی کی خوشی میں مٹھائیاں بھی تقسیم کی گئیں،شہباز شریف نے ہاتھ ہلا کر کارکنوں کے نعروں کا جواب دیا،پارٹی رہنماؤں سے مصافحہ کیا اور اس کے بعد قافلے کی صورت میں ائیر پورٹ سے اپنی رہائشگاہ ماڈل ٹاؤن پہنچے اوربعدازاں رائے ونڈمیں اپنی والدہ اور مریم نواز شر یف سے بھی ملاقات کی جس میں سیاسی سمیت دیگر ایشوز کے حوالے سے بات چیت کی گئی۔شہباز شریف نے اپنے والد میاں محمد شریف، بھائی عباس شریف اور بھابھی کلثوم نواز کی قبروں پر بھی حاضری دی اور فاتحہ خوانی کی، مسلم لیگ (ن) کی ترجمان مریم اورنگزیب نے پارٹی کے صدر شہباز شریف کی وطن واپسی پر حکومت کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا ہے کہ وزیراعظم عمران خان کے گھبرانے کا وقت شروع جبکہ ان کی ڈھیل کا وقت ختم ہوگیا ہے۔ٹوئٹر پر مریم اورنگزیب نے مخالفین کو تنقید کا نشانہ بنایا اور انہیں ایک مرتبہ پھر جھوٹا و نااہل حکمران قرار دے دیا۔لیگی ترجمان نے وزیراعظم عمران خان کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ شہباز شریف کا طیارہ لاہور کے علامہ اقبال انٹرنیشنل ایئرپورٹ پر اْتر گیا ہے، اب آپ کے گھبرانے کا وقت ہوا چاہتا ہے۔اپنے ایک اور ٹوئٹ میں ان کا کہنا تھا کہ شہباز شریف کے وطن آنے کے خوف سے عمران خان پہاڑوں میں چھپ گئے ہیں اور ان کے ترجمانوں کو سانپ سونگھ گیا، اب ان پچاس کرائے کے ترجمانوں کا کیا کریں گے؟انہوں نے کہا کہ شہباز شریف کے واپس آنے کے بعد اب عمران خان کی ڈھیل کا وقت ختم ہوا جاتا ہے۔ترجمان مسلم لیگ (ن) نے کہا کہ ’عمران خان اب جھوٹوں اور مصنوعی بیانیے سے عوام کو بیوقوف نہیں بنا سکتے‘۔ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ تمام جھوٹے اور کرائے کے ترجمانوں میں اگر تھوڑی سی بھی شرم ہے تو رضا کارانہ طور پر استعفیٰ دے دیں۔اپنے ایک اور ٹوئٹ میں ان کا کہنا تھا کہ جیسے ہی شہباز شریف کا طیارہ پاکستانی حدود میں داخل ہوا ویسے ہی جھوٹے اور کرائے کے ترجمانوں پر سکتہ طاری ہوگیا کہ اب وہ اپنے آقا کو کیا جواب دیں گے۔انہوں نے وزیراعظم کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ شہباز شریف ملک سنوارنے والوں میں سے ہیں اور پاکستان کے عوام شہباز شریف سے محبت کرتے ہیں۔مریم اورنگزیب نے وزیراعظم عمران خان کو تنبیہ کی کہ وہ خلق خدا کے صبر سے ڈریں کیونکہ اب بھاگنے اور چْھپنے کا وقت ان کا ہے۔احسن اقبال نے کہا شہباز شریف نے واپس آنا ہی تھا حکومت نے بلاوجہ اس پر پروپیگنڈا کیا جبکہ شہبازشریف معمول کے معائنے کیلیے لندن گئے تھے۔ حکومت کی نا تجربہ کاری کی قیمت عوام ادا کر رہی ہے، حکومت کا سارا کاروبار جھوٹ پرچل رہاہے جبکہ حکمران عوام سے غلط بیانی کررہے ہیں۔ حکمران تکبراورنفرت کی سیاست کررہے ہیں لہٰذا اے پی سی اجلاس میں سیاسی حکمت عملی کا فیصلہ کیا جائے گا۔ لیگی رہنما عظمیٰ بخاری کا کہنا تھا حکومت کی نالائقی کا خمیازہ قوم بھگت رہی ہے تاہم شہبازشریف بجٹ اجلاس میں حکومت کو ایکسپوز کریں گے، ووٹ کو عزت دو کل بھی یہی بیانیہ تھا آج بھی یہی ہے۔مسلم لیگ(ن) کے رہنما طلال چودھری نے کہاہے کہ شہبازشریف عوام کوجھوٹی حکومت کی چیرہ دستیوں سے بچانے کیلئے واپس آئے ہیں،یہ ناجائز، نااہل،نالائق اور جھوٹی حکومت ہے جوملک وقوم پرظلم ڈھارہی ہے۔ ایک بیان میں طلال چودھری نے کہا کہ عمرا ن خان نے کہا تھا آئی ایم ایف نہیں جاؤں گا، خود کشی کرلوں گا؟یہ وعدہ پورا نہیں ہوا،عمران نیازی عوام سے کیا گیاخود کشی کا ہی وعدہ پورا کرلیں،قوم بے چینی سے منتظر ہے کہ کب آپ اس کی تاریخ دیں گے؟۔ شہبازشریف نے 28 مئی یوم تکبیر کے کامیاب پروگرام کے انعقاد پر مریم نواز کو شاباش دی۔شہباز شریف نے کہا کہ نالائق حکومت نے عوام کی مشکلات میں مزید اضافہ کیا ہے۔ شریف فیملی پر آفتوں کے پہاڑ ضرور ہیں لیکن پہلے کی طرح مشکلات سے نکل جائیں گے۔ شریف فیملی متحد ہے، مخالفین باتیں کرتے رہتے ہیں۔جبکہ مریم نواز نے شہباز شریف سے کہا کہ پارٹی معاملات میں آپ کی کمی شدت سے محسوس ہوتی رہی۔ذرائع کے مطابق ملاقات میں حکومت کے خلاف احتجاجی تحریک پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا۔ جبکہ شہبازشریف نے پارٹی کا نائب صدر بننے پر مریم نوازکو مبارکباد بھی دی۔

شہباز کی واپسی 

 اسلام آباد (این این آئی)صدر پاکستان مسلم لیگ (ن ) اور قائدِ حزبِ اختلاف شہباز شریف کے پارلیمانی ایڈوائزری گروپ کا اجلاس بروز (آج)پیر مورخہ 10 جون کو دوپہر اڑھائی بجے پارلیمنٹ ہاؤس میں اپوزیشن چیمبر میں منعقد ہوگا۔ترجمان مسلم لیگ (ن) مریم اورنگزیب کے مطابق پاکستان مسلم لیگ ن کی مشترکہ پارلیمانی پارٹی کا اجلاس بروز پیر مورخہ 10 جون کو پارلیمنٹ ہاؤس میں ہو گا۔پاکستان مسلم لیگ (ن)کے صدر اور قائد حزب اختلاف شہباز شریف نے پارٹی کی اکنامک ایڈوائزری کونسل کااجلاس بروز بدھ، مورخہ 12 جون کو اسلام آباد میں طلب کر لیا،اجلاس صبح گیارہ بجے اپوزیشن چیمبر، پارلیمنٹ ہاؤس میں ہوگا، اجلاس میں ملک کی معاشی صورتحال پر تفصیلی غور ہوگا، مہنگائی، بیروزگاری، افراط میں ہولناک اضافے، ملک پر بڑھنے والے قرض، ڈالر کی قیمت سمیت دیگر معاشی امور زیر غور آئیں گے۔ اجلاس میں بجٹ کے حوالے سے سے مشاورت ہوگی اور مختلف تجاویز مرتب کی جائیں گی جبکہ عوام دشمن بجٹ کے خلاف مزاحمت کے حوالے سے حکمت عملی تیار کی جائے گی۔

پالیمانی اجلاس

مزید : صفحہ اول