پاک ایران سرحد پر غیر قانونی تجارت ختم کرنے کیلئے بینکنگ سہولیات ناگزیر

    پاک ایران سرحد پر غیر قانونی تجارت ختم کرنے کیلئے بینکنگ سہولیات ناگزیر

کوئٹہ (مانیٹرنگ ڈیسک)کوئٹہ میں ایرانی قونصل جنرل محمد رفیع نے کہا ہے کہ بینکنگ سہولیات کی عدم فراہمی کے باعث پاکستان اور ایران کے درمیان غیرقانونی تجارت کو فروغ مل رہا ہے۔ کوئٹہ چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری (کیو سی سی آئی) کے زیر اہتمام عید ملن پارٹی کے موقع پرڈان نیوز سے گفتگوکرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان مفاہمتی یادداشت پر دستخط کے باوجود اقدامات نہیں اٹھائے گئے۔محمد رفیع نے زور دیا کہ بارڈر پر موثر بینکنگ سہولیات کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے۔ایرانی قونصل جنرل کا کہنا تھا کہ بینکنگ کی سہولیات کے بغیر بلوچستان سے ملحقہ تافتان سرحد (پاک ایران سرحد زیرو پوائنٹ) سے غیرقانونی تجارت نہیں روکی جاسکتی۔محمد رفیع نے کہا کہ پاکستانی اور ایرانی حکام نے مشترکہ پاک ایران چیمبر آف کامرس تشکیل دیا تھا جس کے تحت تجارتی حجم بڑھانے کی ضرورت ہے اور اس ضمن میں حائل رکاوٹ کو مزید دور کرنے کے لیے اقدامات اٹھائے جائیں۔انہوں نے کہا کہ تحریک انصاف کی حکومت میں پاک ایران تعلقات میں بہتری آئی تاہم بعض اقتصادی اور تجارتی مسائل کو دور کرکے دونوں ممالک کے تجارتی حجم کو 5 ارب ڈالر تک بڑھایا جا سکتا ہے۔ایرانی قونصل جنرل کا کہنا تھا کہ ایرانی مصنوعات پر ٹیکس اور ڈیوٹی میں اضافے کے باعث دونوں ممالک کے درمیان غیرقانونی تجارت میں اضافہ ہوا۔انہوں نے کہا کہ پاک ایران ریلوے لائن کی مرمت میں ان کا ملک بھرپور تعاون کرے گا۔قومی اسمبلی کے ڈپٹی سپیکر قاسم خان سوری نے کہا کہ پاکستان نے انسداد غیرقانونی تجارت اور سرحد پر دہشت گردوں کی نقل و حمل روکنے کے لیے سنجیدہ اقدامات اٹھائے ہیں۔انہوں نے کہا کہ پاک ایران بارڈر کے لیے رسپانس فورس تشکیل دی جائے گی۔ڈپٹی سپیکر قومی اسمبلی نے کہا کہ پاکستان شدید معاشی بحران کا شکار ہے لیکن وزیراعظم عمران خان نے اقتدار میں آکر قومی معیشت کے لیے موثر اقدامات اٹھائے ہیں جس کے مثبت ثمرات جلد سامنے آئیں گے۔

ایرانی قونصل جنرل 

مزید : صفحہ آخر