دروس ختم نبوت کا سلسلہ بھرپور اندا ز میں شروع کریں گے،علماء

دروس ختم نبوت کا سلسلہ بھرپور اندا ز میں شروع کریں گے،علماء

  

لاہور(پ ر)عالمی مجلس تحفظ ختم نبوت کاایک اہم اجلاس جامع مسجد امن باغبانپورہ لاہور میں مجلس لاہور کے سرپرست مولانا جمیل الرحمن اخترکی صدارت میں منعقد ہوا۔اجلاس میں عالمی مجلس تحفظ ختم نبوت کے مرکزی ناظم نشرواشاعت مولانا عزیز الرحمن ثانی، جنرل سیکرٹری مولانا علیم الدین شاکر، پیرضوان نفیس، حافظ اشرف گجر، مولانا عبدالعزیز، مولانا خالد محمود، مولانا سید عبداللہ، قاری ظہورالحق، قاری شاہد منظور، مولانا سعیدوقار، حافظ انجینئر نعیم الدین شاکر، مولانا زبیرجمیل، مولانا عبیدالرحمن معاویہ نے شرکت کی۔ اجلاس میں فیصلہ کیا گیاکہ لاہور میں بھرپور انداز میں دروس ختم نبوت کا سلسلہ شروع کیا جائیگا اور مجلس تحفظ ختم نبوت کی طرف سے شائع شدہ لٹریچر عقیدہ ختم نبوت کی اہمیت اور رد قادیانیت پر مشتمل لٹریچر تقسیم کیا جائیگا۔

۔ 

رابطہ کمیٹی کے ممبران کے بیانات آن لائن بھی شروع کرنے کا فیصلہ بھی کیا گیا۔علماء نے وفاق المدارس کے قائدین سے اپیل کی کہ اب بلاتاخیر ایس اوپیز پر عمل کرتے ہوئے مدارس عربیہ کو کھولا جائے دینی مدارس اب مزید تعلیمی نقصان برداشت نہیں کرسکتے۔علماء نے کہا کہ علماء، اہل مدارس اور مساجد نے پہلے بھی ایس اوپیز پر مکمل طورپر عمل کیا حالانکہ دیگر کئی مقامات پر ایس او پیز کی خلاف ورزی کی گئی انکو تو بند نہیں کیا گیا لیکن جہاں مکمل طورپر ایس او پیزعملدرآمدہورہا ہے انکو بند کیا ہوا ہے یہ کہاں کا انصاف ہے؟۔علماء نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ کہ حالات جیسے بھی ہوں ختم نبوت اور ناموس رسالت کا تحفظ اور فتنہ قادیانیت کا تعاقب ہرقیمت پر کیا جائیگا ملک میں کسی طرح بھی قادیانیوں کی غیرقانونی سرگرمیوں کو برداشت نہیں کرینگے۔ علماء نے کہا کہ قادیانی اپنی تعداد سے کہیں زیادہ کلیدی عہدوں پر فائز ہیں۔ اگر کسی اور ملک دشمن گروہ کی ناز برداریاں نہیں کی جاتیں تو قادیانیوں کو ہی کیوں نوازا جاتاہے۔ حکومت ملک وملت کے غدار قادیانیوں کی پشت پناہی کرنے والے افراد کی نشان دہی کرکے منظر عام پر لائے تاکہ بہر صورت آئین پاکستان کا تحفظ کیا جاسکے۔ ایک قرار داد میں عمر ثانی امیر المؤمنین حضرت عمر بن عبدالعزیز? اور ان کے اہل خانہ کی قبور کی بے حرمتی شدیدالفاظ مذمت کی گئی۔ اوآئی سی سے مطالبہ کیا گیا کہ متعلقہ ملک کو اکابر کی قبور کی حفاظت کا پابند بنایا جائے اور بے حرمتی کرنے والوں کو قرار واقعی سزا دی جائے۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -