ٹرانزٹ ٹریڈ کو بڑھانے کیلئے ایس او پیز ناگزیر ہے‘ مقصور انور پرویز

ٹرانزٹ ٹریڈ کو بڑھانے کیلئے ایس او پیز ناگزیر ہے‘ مقصور انور پرویز

  

پشاور (سٹی رپورٹر)سرحد چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری کے صدر انجینئر مقصود انور پرویز نے حکومت اور وزارت داخلہ سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ پاک افغان باہمی تجارت‘ ٹرانزٹ ٹریڈ اور ایکسپورٹ‘ امپورٹ کو بڑھانے کے لئے وہی ایس اوپیز نافذ کئے جائیں جو ایس اوپیز بین الاقوامی سطح پر ایئر پورٹس پر نافذ کئے گئے ہیں۔طورخم بارڈرزیرو پوائنٹ کیلئے پالیسی پر نظرثانی کی جائے۔ پاک افغان ٹرانزٹ ٹریڈ اور ایکسپورٹ کی گاڑیوں کو افغانستان میں کسی بھی مقام پر سامان کو اتارنے کی اجازت دی جائے۔ پاک افغان باہمی تجارت‘ ٹرانزٹ ٹریڈ کی راہ میں درپیش مسائل اوررکاوٹوں کو دور کرنے پر عملی اقدامات کئے جائیں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے گذشتہ روز پشاور میں تعینات افغان کمرشل اتاشی فواد ارش سے ملاقات کے دوران کیا۔ اس موقع پر سرحد چیمبرکے سینئر نائب صدر شاہد حسین‘ نائب صدر عبدالجلیل جان‘ پاک افغان جائنٹ چیمبر آف کامرس اینڈ انڈسٹری‘ سرحد چیمبر کے سابق سینئر نائب صدر اور فرنٹیئر کسٹمز ایجنٹس ایسوسی ایشن کے صدرضیاء الحق سرحدی بھی ملاقات کے دوران موجود تھے۔ اس موقع پر سرحد چیمبر کے سینئر نائب صدر شاہد حسین نے اجلاس کو پاک افغان باہمی تجارت ٹرانزٹ ٹریڈ میں درپیش رکاوٹوں اور پاک افغان بزنس کمیونٹی کے مسائل سے تفصیلاً آگاہ کیا۔ انہوں نے کہاکہ پاک افغان طورخم بارڈر‘ زیرو پوائنٹ پر ڈرائیور کے تبادلہ اور بارڈرز پر سامان کو اتارنے کے باعث گذشتہ تین ماہ سے دونوں ہمسایہ ممالک کے درمیان تجارت وبزنس نہ ہونے کے برابر ہے جس کیوجہ سے بارڈرز کے دونوں جانب بزنس کمیونٹی کو شدید مالی نقصانات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ انہوں نے حکومت پر زور دیا کہ پاک افغان باہمی تجارت اور ٹرانزٹ ٹریڈ میں درپیش مسائل کے فوری حل کے لئے عملی اقدامات کئے جائیں۔ انہوں نے اجلاس کو بتایا کہ پاک افغان بزنس کمیونٹی کا مشترکہ جرگہ افغان قونصلیٹ اوروفاقی وصوبائی حکومتوں اور ماتحت اداروں کے تعاون سے پشاور میں منعقد کئے جا رہے ہیں۔ اس سے قبل اجلاس نے پاک افغان باہمی تجارت اور ٹرانزٹ ٹریڈ میں درپیش مسائل کے دیرپا حل اوررکاوٹوں کو دور کرنے کے لئے مشترکہ کوششیں کرنے پر اتفاق کیا اور کہا ہے کہ پاک افغان تجارت سے پاکستان کی معیشت اور دونوں جانب کی ہزاروں لوگوں کا کاروبار اورروزگار وابستہ ہے۔ اس لئے پاک افغان باہمی تجارت اور ٹرانزٹ ٹریڈ کے حوالے سے مسائل کے حل پر خصوصی توجہ دی جائے کیونکہ دونوں ممالک کے درمیان تجارت بڑھنے اور اربوں روپے زرمبادلہ کی شکل میں پاکستان کے خزانہ میں آئے گا اورریونیو میں اضافہ ہوگا۔ اس موقع پر افغان کمرشل اتاشی فواد ارش نے سرحد چیمبر کے صدر انجینئر مقصود انور اور اجلاس کے دیگرشرکاء کی تجاویز سے مکمل طور پر اتفا ق کیا اور بارڈرزکے دوسری جانب افغان بزنس کمیونٹی کو درپیش مسائل‘ امپورٹ کے حوالے سے رکاوٹوں سے تفصیلاً آگاہ کیا۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -