”بھارت1 اعشاریہ 4 ارب آباد ی میں کورونا کی 7 ہزار500 اموات کیساتھ بدترین خطہ بن گیا“غیرملکی جریدے ”فنانشل ٹائمز“نے مودی حکومت کی ناقص کارکردگی کابھانڈا پھوڑ دیا

”بھارت1 اعشاریہ 4 ارب آباد ی میں کورونا کی 7 ہزار500 اموات کیساتھ بدترین خطہ بن ...
”بھارت1 اعشاریہ 4 ارب آباد ی میں کورونا کی 7 ہزار500 اموات کیساتھ بدترین خطہ بن گیا“غیرملکی جریدے ”فنانشل ٹائمز“نے مودی حکومت کی ناقص کارکردگی کابھانڈا پھوڑ دیا

  

لندن (ڈیلی پاکستان آن لائن)غیرملکی جریدے ”فنانشل ٹائمز“نے کورونا کیخلاف مودی سرکار کی ناقص کارکردگی کا بھانڈا پھوڑ دیا۔

غیرملکی جریدے ”فنانشل ٹائمز“نے اپنی رپورٹ میں لکھا ہے کہ بھارت کی کورونا کیخلاف حکمت عملی بری طرح ناکام ہو گئی ہے،بھارت1 اعشاریہ 4 ارب آباد ی میں کورونا کی 7 ہزار500 اموات کیساتھ بدترین خطہ بن گیا۔

غیرملکی جریدے نے لکھا ہے کہ بھارتی وزیراعظم نے 500کورونا کیسز پر 24 مارچ کو دنیا کاظالمانہ لاک ڈاﺅن کیا،مودی نے تباہ ہوتی معیشت پر مئی کے آخر میں لاک ڈاﺅن ختم کیاجس سے انفیکشن بڑھا،مودی کاہندوستان خطرناک حد تک کورونا کی طوالت برداشت کرنے کو تیار نہیں۔

رپورٹ میں کہاگیا ہے کہ ہندوستان میں لاک ڈاﺅن حکمت عملی بری طرح ناکام ہو گی ،بھارت میں لاک ڈاﺅن بوکھلاہٹ سے کاروبار بند،ٹرانسپورٹ معطل اورمزدور بے روزگار ہو گئے،ہندوستان میں لاکھوں افرادکچی آبادی اورصنعتی علاقوں میںبنا معاش پھنسے رہے ۔

رپورٹ میں مزید کہاگیا ہے کہ بھارت میں لاک ڈاﺅن سے معاشی بحران پیدا ہواجس سے 14 کروڑ افراد بے روزگار ہوئے، مودی کے باعث ہندوستان 40 سال میں پہلی مرتبہ شدید کساد بازاری سے گزر رہا ہے ،پوری دنیا میں لاک ڈاﺅن بررقراررکھنا مشکل آبادی کیلئے دوررس معاشی مشکلات کا پیشہ خیمہ رہا۔

غیر ملکی جریدے نے اپنے رپورٹ میں لکھا ہے کہ ہندوستان میں یومیہ کورونا کیسز اوسطاً9 ہزار439 ہو چکے ہیں ،لاک ڈاﺅن کے بعد ہندوستانی معیشت مخدوش کورونا کیسز تیزی سے بڑھ رہے ہیں ،شہروں میں دیہی علاقوں کو جانے والے مزدور کورونا پھیلاﺅ کاذریعہ بن گئے۔

رپورٹ میں کہاگیا ہے کہ ٹڈی دل کے غول ہندوستانی معیشت اورغذائی پیداوار کیلئے دوسرابڑاخطرہ ہیں ،لاک ڈاﺅن کے مضراثرات معاشی حقائق نے مودی کو سب کھولنے پر مجبور کردیا

جریدے نے انتباہ کیا ہے کہ بھارت کاشعبہ صحت بغیر مالی وسائل شدید دباﺅ میں ہے ،بھارتی حکومت نے 266 ارب ڈالر یا شرح نموکے10 فیصدمالیاتی پیکیج کااعلان کیا،درحقیقت ہندوستانی مالیاتی پیکیج صرف شرح نموکا1 اعشایہ 5 فیصد ہے ،ہندوستان اب محدود پابندیوں، ٹیسٹنگ ،ڈیٹا تبادلہ ،ماسک اورصفائی کاسوچ رہا ہے،رپورٹ میں کہاگیا ہے کہ اقدامات کے بعد دنیا کے دوسرے گنجان آباد ملک میں صورتحال بھیانک ہورہی ہے۔

مزید :

اہم خبریں -بین الاقوامی -