عدالتی جنگ لڑ کر زچگی کیلئے دبئی سے بھارت پہنچنے والی خاتون کے ہاں بچی کی پیدائش لیکن نومولود کی پیدائش سے ایک روز قبل شوہر کے بارے ایسی خبر آگئی کہ ہرآنکھ نم ہوگئی

عدالتی جنگ لڑ کر زچگی کیلئے دبئی سے بھارت پہنچنے والی خاتون کے ہاں بچی کی ...
عدالتی جنگ لڑ کر زچگی کیلئے دبئی سے بھارت پہنچنے والی خاتون کے ہاں بچی کی پیدائش لیکن نومولود کی پیدائش سے ایک روز قبل شوہر کے بارے ایسی خبر آگئی کہ ہرآنکھ نم ہوگئی

  

نئی دہلی(مانیٹرنگ ڈیسک) لاک ڈاﺅن کے دوران بھارتی سپریم کورٹ کی مداخلت سے زچگی کے لیے دبئی سے بھارت آنے والی حاملہ لڑکی کا شوہر دبئی میں انتقال کر گیا۔کورونا وائرس کا پھیلاﺅ روکنے کے لیے جب بھارتی حکومت نے پروازیں بند کیں، اس وقت 27سالہ گیتا سریدھرن نامی حاملہ لڑکی اپنے شوہر کے ساتھ دبئی میں تھی۔ وہ بچے کی پیدائش کے لیے بھارت آنا چاہتی تھی تاکہ محفوظ طریقے سے زچگی کا مرحلہ طے ہو سکے لیکن اس سے پہلے ہی پروازیں بند ہو گئیں۔اس نے بھارتی سپریم کورٹ میں درخواست دائر کرکے اپنے بھارت واپس پہنچنے کی راہ ہموار کی اور گزشتہ روز اس کے ہاں ایک بچی کی پیدائش ہوئی ہے لیکن گیتا نہیں جانتی اس کٹھن مرحلے میں اس کے ساتھ کھڑا ہونے والا اس کا28سالہ شوہر نتھن چندرن اب اس دنیا میں نہیں رہا۔

گلف نیوز کے مطابق بھارتی سپریم کورٹ کے حکم پر بھارتی حکومت گیتا کو واپس بھارت لانے پر مجبور ہو گئی۔ تاہم نتھن کام کی وجہ سے دبئی میں ہی مقیم رہا۔ دو روز قبل نتھن کی دبئی میں واقع اپنے گھر میں نیند کے دوران ہی موت واقع ہو گئی اور اس سے اگلے روز گیتا نے کیرالہ میں بچی کو جنم دے دیا۔ نتھن کے متعلق بتایا جا رہا ہے کہ وہ ہائی بلڈپریشر اور دل کے ایک عارضے کا شکار تھا اور ممکنہ طور پر اس کی موت دوران نیند ہارٹ اٹیک آنے سے ہوئی۔ گیتا کے گھر والوں کا کہنا ہے کہ ”ہم نے گیتا کو صرف اتنا بتایا ہے کہ نتھن کی صحت کچھ ٹھیک نہیں ہے۔ ہم نہیں چاہتے کہ وہ زچگی کے اس مرحلے پر شوہر کی موت کے غم میں مبتلا ہو۔ “

مزید :

بین الاقوامی -