گھوٹکی ٹرین حادثہ، ریلوے آپریشن تاحال معطل، مسافر خوار 

گھوٹکی ٹرین حادثہ، ریلوے آپریشن تاحال معطل، مسافر خوار 

  

 کراچی(آئی این پی) سندھ کے شہر گھوٹکی میں ہونیوالے ہولناک ٹرین حادثے کے بعد ریلوے آپریشن تاحال بحال نہ ہوسکا، متعدد ٹرینیں منسوخ اور تاخیر کا شکار ہوچکی ہیں جبکہ محکمے کو کروڑوں روپے کا نقصان الگ ہورہا ہے۔ تفصیلات کے مطابق گھوٹکی ٹرین حادثے کے بعد متاثرہ ٹرین آپریشن 2 دن بعد بھی معمول پر نہ آسکا، مسافر اور کارگو ٹرین آپریشن کو جزوی طور پر بحال کیا گیا ہے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ متاثرہ ٹریک مقررہ سپیڈ کیلئے مکمل بحال ہونے میں ایک ہفتے سے زائد کا وقت درکار ہے، ٹریک پر ٹرینیں 10سے 20کلو میٹر کے درمیان رفتار سے چلائی جارہی ہیں۔ کارگو ٹرین آپریشن 3 دن سے معطل ہونے سے محکمہ ریلوے کو کروڑوں روپے کا نقصان ہورہا ہے۔ حادثے کے بعد منگل کو کراچی سے 14ٹرینیں منسوخ کی گئیں۔ منگل اور بدھ کی درمیانی شب صرف 3 ٹرینیں چلائی گئیں۔ خیبر میل، گرین لائن اور سکھر ایکسپریس کی روانگی تاخیر کاش کار ہے جبکہ اتوار اور پیر کو روانہ ہونے والی ٹرینیں 25سے 30گھنٹے تاخیر سے منزل مقصود پر پہنچیں گی۔دوسری جانب  محکمہ ریلوے کی بدحالی مسافروں کیلئے وبال جان بن گئی۔ پشاور سے کراچی آنے والی خیبر میل کی بوگی پٹری سے اترگئی۔ ذرائع کے مطابق پشاور سے کراچی آنیوالی خیبر میل کی بوگی حیدرآباد اور کوٹری سٹیشن کے درمیان اتری، دریائے سندھ پل کے قریب ہونے کے سبب ٹرین کی سپیڈ کم تھی جس کے سبب خیبر میل بڑے حادثے سے بچ گئی اور مسافروں کو نقصان نہیں پہنچا۔ ذرائع کے مطابق بوسیدہ بوگیاں اور ٹریک کی خستہ حالی کی وجہ سے بوگیاں پٹری سے اتر جاتی ہیں۔ ملت ایکسپریس کے جان لیوا حادثے کے بعد صرف تیسرے دن میں یہ دوسرا واقعہ ہے۔

ٹرین آپریشن معطل

مزید :

صفحہ اول -