خیبر پختونخوا پارلیمنٹری ویمن کا کس کمیٹی کا صوبائی وزیر خزانہ تیمور جھگڑا کیساتھ مشاورتی اجلاس

خیبر پختونخوا پارلیمنٹری ویمن کا کس کمیٹی کا صوبائی وزیر خزانہ تیمور جھگڑا ...

  

 پشاور(سٹاف رپورٹر)پارلیمنٹری ویمن کاکس کمیٹی اور وزیرصحت و خزانہ تیمور جھگڑا کے مابین عمر اصغر فاونڈیشن کے تعاون سے جنسی طور پر مساویانہ بجٹ سے متعلق تجاویز بارے مشاورتی اجلاس کا انعقاد کیا گیا۔ اجلاس میں چئیرمین ویمن کاکس ڈاکٹر سمیرا شمس، سینئیر وائس پریڈنٹ پارلیمنٹری ویمن کاکس مدیحہ نثار، ایم پی اے نعیمہ کشور، آسیہ خٹک، ساجدہ حنیف، شگفتہ ملک بصیرت خان، چئیرپرسن خیبر پختونخوا کمیشن آن سٹیٹس آف ویمن رفعت سردار، عمراصغر خان فاونڈیشن کی ایگریکٹیو ڈائریکٹر راشدہ دوہد اور دیگر متعلقہ اداروں کے حکام نے شرکت کی۔ اجلاس کا مقصدخیبر پختونخوا کے آئندہ مالی سال 22-2021  کے بجٹ کے لیے مختلف تجاویز پر مشاورت کرنا تھا۔ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے وزیرخزانہ و صحت تیمور جھگڑا نے بتایا کہ آئندہ مالی سال کے بجٹ میں خواتین کے روزگار اور دیگر امور بارے نکات شامل ہیں, لیڈی ہیلتھ ورکرز کو ریگولرائز کرنے کیلئے اسمبلی میں بات چل رہی ہے۔ وہ خواتین جن کے شناختی کارڈز نہیں بنے,ان کی ویکسینیشن کا کوئی طریقہ کار وضع کرنے کے حوالے سے این سی او سی سے بات کی جائے گی,تعلیم پر دو سو ارب خرچ ہوتے ہیں جن میں تقریباً نصف  تعلیمی ادادے لڑکیوں کے ہیں۔ اسی طرح صحت میں بھی ہماری آبادی کا نصف حصہ خواتین مستفید ہوتی ہیں۔صوبائی وزیر خزانہ کا کہنا تھا کہ اسی طرح احساس پروگرام میں بھی مستحق و نادار خواتین  کو پیسے ملتے ہیں۔ چئیر پرسن پارلیمنٹری ویمن کاکس ڈاکٹر سمیرا شمس نے اجلاس کو بتایا کہ بجٹ میں خواتین کیلئے فنڈز مختص تو ہوتے ہیں لیکن اس کو اگر سسٹینبل ڈویلپمنٹ گولز کے رو سے ترتیب دیا جائے تونہ صرف اسکا صحیح استعمال ہوگا بلکہ  اس سے بجٹ کی بین الاقوامی سطح پر پذیرائی ہوگی۔ ڈاکٹر سمیرا شمس کی تجویز سے اتفاق کرتے ہوئے صوبائی وزیر خزانہ تیمور جھگڑا نے کہا کہ بجٹ تقریر میں سسٹینبل ڈویلپمنٹ گولز کا ذکر ضرور کرینگے اور اس پر خصوصی توجہ بھی دی جائیگی۔ گھریلو تشدد کی روک تھام بل سمیت خواتین کیلئے مخصوص دیگر قوانین کے نفاذ کیلئے حکومت خاطر خواہ فنڈز مختص کیے جائینگے۔ اسی طرح ضلعی تحفظ کمیٹیوں کی تقرری اور ان کی تکنیکی معاونت بھی حکومت کریگی۔ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے صوبائیی وزیر خزانہ نے کہا کہ صوبے میں دارلامانوں کے قیام اور اصلاحات کیلئے سو ملین رقم مختص کرنے کا اعلان بھی کیاجبکہ خواتین کیلئے مفت قانونی مدد کیلئے مختص رقم میں اضافے کیلئے بھی کوشش کی یقین دہانی کرائی۔تیمور جھگڑا کا کہنا تھا کہ  بجٹ میں بلاسود قرضوں کی فراہمی کیلئے دس بلین روپے مختص کئے گئے ہیں جن میں خواتین بھی شامل ہیں. پارلیمنٹری ویمن کاکس کمیٹی کی چئیرپرسن ڈاکٹر سمیرا شمس کا کہنا تھا کہ خواتین پر تشدد کے واقعات کی جانچ کے لیے فرانزک لیب اہم ہیں,اسلیے حکومت کو صوبے کے مختلف اضلاع میں لیب قائم کرنے کے لیے اقدامات کرنے چاہیے,پشاور کی فارنزک لیب میں بھی ڈی این اے ٹیسٹنگ کی سہولت کا جراء کرنے کے لیے توجہ دینی چاہیے. پارلیمنٹری ویمن کاکس کمیٹی کی ممبران نے جینڈر بیسڈ وائلنس کیلئے مخصوص کورٹس کے قیام کی تجویز بھی پیش کی۔

مزید :

صفحہ اول -