خواتین کے دودھ سے مہنگے داموں بکنے والے دیدہ زیب زیورات بنائے جانے کا ا نکشاف

خواتین کے دودھ سے مہنگے داموں بکنے والے دیدہ زیب زیورات بنائے جانے کا ا نکشاف
خواتین کے دودھ سے مہنگے داموں بکنے والے دیدہ زیب زیورات بنائے جانے کا ا نکشاف

  

لندن(مانیٹرنگ ڈیسک) ماں کے دودھ کا واحد مصرف یہی ہے کہ اسے ماں اپنے بچے کو پلاتی ہے لیکن اب اس کا ایک اور ایسا منافع بخش مصرف سامنے آ گیا ہے کہ سن کر آپ کے یقین کرنا مشکل ہو جائے گا۔ ڈیلی سٹار کے مطابق یہ مصرف چھاتی کے دودھ سے دیدہ زیب زیورات بنانا ہے جو بہت مہنگے داموں فروخت ہوتے ہیں۔ برطانیہ میں دو خواتین وکٹوریہ بریڈلے اور اس کی دوست لورین ڈیوائن نے یہ کاروبار شروع کیاجو اس قدر مقبول ہوا کہ اب وہ ’بوب بلنگ‘ (Boob Bling)کے نام سے ایک کمپنی بنا چکی ہیں اور خطیر آمدنی کما رہی ہیں۔

رپورٹ کے مطابق دونوں سہیلیاں خواتین کا دودھ حاصل کرکے اسے ایک فارمولے کے ذریعے کرسٹل کی شکل دیتی ہیں۔ اس شکل میں آ کر یہ دودھ اتنا ہی خوبصورت اور چمکدار لگنے لگتا ہے، جتنے کہ قیمتی پتھروں سے بنے موتی۔پھر وہ اس کرسٹل سے انگوٹھیاں، ہار، جھمکے اور بالیاں وغیرہ بناتی ہیں۔ 37سالہ وکٹوریہ اور لورین کا کہنا ہے کہ ان کے بنائے ہوئے یہ زیورات 180پاﺅنڈ (تقریباً 40ہزار روپے) سے 280پاﺅنڈ (تقریباً 62ہزار روپے) فی پیس تک فروخت ہوتے ہیں اور انہیں ایک پیس بنانے میں لگ بھگ دو ہفتے کا وقت لگتا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ”ہم دودھ کو چولہے پر ابالتی ہیں اور اس میں کچھ دیگر چیزیں ڈالتی ہیں جس سے دودھ پیسٹ کی شکل اختیار کر لیتا ہے۔ پھر اس پیسٹ کو ہم ڈیڑھ ہفتے کے لیے رکھ دیتے ہیں اور یہ کرسٹل بن جاتا ہے، جسے ہم خوبصورت اشکال دے کر ان سے زیورات بناتی ہیں۔“

مزید :

ڈیلی بائیٹس -