جنوبی پنجاب صوبہ بنانے کا فیصلہ حکومت کو بھاری پڑے گا‘ قائدین‘23مارچ کو بہاولپور صوبہ محاذ کا پریس کلب کے سامنے بھوک ہڑتالی کیمپ لگانے کا اعلان

جنوبی پنجاب صوبہ بنانے کا فیصلہ حکومت کو بھاری پڑے گا‘ قائدین‘23مارچ کو ...

  



بہاول پور(بیورورپورٹ)جنوبی پنجاب صوبہ بنانے کا فیصلہ حکومت کو بڑابھاری پڑے گا جس کا ری ایکشن آئندہ(بقیہ نمبر34صفحہ12پر)

آنے والے الیکشن میں بہاول پور کی عوام پی ٹی آئی کو ووٹ کے ذریعے دے گی۔23 مارچ کو بہاول پور صوبہ محاذ نے پریس کلب کے سامنے بھوک ہڑتالی کیمپ لگانے کا اعلان کر دیا۔ بہاول پور صوبہ کے حامی جماعتوں کے قائدین نے نومنتخب چیئر مین بہاول پور اتحاد فرخ رفیع عباسی کی رہائشگاہ پر اجلاس میں کہی۔اجلاس میں حاجی محمد نواز ناجی چیف ایگزیکٹو تحریک صوبہ بہاولپور،جام حضور بخش لاڑچیئر مین تحریک صوبہ بہاول پور،اکرم انصاری رہنماء تحریک صوبہ،مجید ہاشمی سربراہ بہاول پور صوبہ محاذ،قاری مونس بلوچ متحدہ تحریک صوبہ،عبدالجلیل ہاشمی رہنماء جماعت اسلامی،خواجہ عمیر قیوم (ن) لیگ،آسیہ کامل متحدہ محاذ، فرخندہ شیخ پی ٹی آئی،قاری عبدالقدیر رہنماء جمعیت علماء اسلام(ف)،بشپ نعیم عیسی رہنماء منیارٹی متحدہ محاذ،ذوہیب غوری چیئر مین یوتھ تحریک صوبہ بحالی،ملک سعید چنڑ،جان محمد چوہان،محمد وسیم خان،ملک ثناء اللہ،ملک عبدالقیوم و دیگر شریک تھے۔اجلاس میں صوبہ بحالی کی تمام جماعتوں کے قائدین نے فیصلہ کیا کہ آئندہ بہاول پور صوبہ کی تحریک مل کر چلائی جائے گی۔اجلاس میں قائدئن نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ بہاول پور صوبہ ہمارا آئینی حق ہے ہماری شناخت اور پہچان ہے ہمارے روشن مستقبل کی ضمانت ہے،خطہ بہاول پور کا قیام پاکستان اور استحکام پاکستان میں ناقابل فراموش کردار ہے ریاست بہاول پور کی عدم شمولیت سے پاکستان کے دو صوبے پنجاب اور سندھ کی زمینی حدود بھی نہ مل سکتیں جس کی وجہ سے پاکستان کا استحکام خطرات سے دوچار رہتا۔قائدین نے کہا کہ ریاست بہاول پور کو جس کا رقبہ 20 ہزار مربع میل ہے جو کہ دنیا کے کئی خود مختیار ممالک سے کہیں زیادہ ہے کو پاکستان میں ضم کرکے پاکستانی حدود کو مستحکم کیا نوزائیدہ پاکستان کی کمزور معیشت کو بہاول پور کی معیشت کے وسائل سے سہارا دیا گیا اور پاکستان کے خالی خزانے کو دس کروڑ روپے اور زرضمانت کے طور پر اسٹیٹ ببنک کو جسب ضرورت سونا فراہم کیا گیا،ملک کے سرکاری ملازمین کی چھ ماہ کی تنخوائیں نواب آف بہاول پور نے دی۔انہوں نے کہا کہ بہاول پور کی صوبائی بحالی عوام کا تاریخی،آئینی،سیاسی اور جمہوری حق ہے جسے کچھ عرصہ کے لیے غضب تو کیا جا سکتا ہے لیکن ہمیشہ کے لیے چھینا نہیں جا سکتا۔ بہاول پور کی عوام کسی جنوبی پنجاب صوبہ یا کسی سیکرٹریٹ کو تسلیم نہیں کرتے اور اگر حکمرانوں نے جنوبی پنجاب کو صوبہ بنایا تو دریا ئے ستلج پر ہزاروں افراد دھرنا دیں گے۔

اعلان

مزید : ملتان صفحہ آخر