کرک میں جوڈیشل کمپلیکس کے منصوبے کیلئے فنڈز جاری

  کرک میں جوڈیشل کمپلیکس کے منصوبے کیلئے فنڈز جاری

  



پشاور(نیوزرپورٹر)پشاورہائی کورٹ کے چیف جسٹس وقاراحمدسیٹھ نے کرک میں جوڈیشل کمپلیکس کے منصوبے کو مکمل کرنے کے لئے خیبرپختونخواحکومت کوفنڈزجاری کرنے کے احکامات جاری کردئیے ہیں عدالت عالیہ کے فاضل بنچ نے یہ احکامات گذشتہ روز ڈسٹرکٹ بارایسوسی ایشن کرک کی جانب سے دائررٹ منظورکرتے ہوئے جاری کئے اس موقع پرفنانس ڈیپارٹمنٹ کے نمائندہ بھی عدالت میں پیش ہوا جبکہ ایڈیشنل ایڈووکیٹ جنرل خیبر پختونخواہ عدالت میں موجود تھے فنانس ڈیپارٹمنٹ کے نمائندے نے عدالت کو بتایا کہ: پچاس ملین کی رقم ڈسٹرکٹ جوڈیشل کمپلیکس کیلئے جاری کرچکے ہیں جس پردرخواست گذار نے عدالت کو بتایاکہ ساٹھ فیصد کام مکمل ہو چکا ہے لیکن اب فنڈز نہیں دیا جارہا جس سے کام رکا ہوا ہے سالانہ ترقیاتی پروگرام میں 2015 میں جوڈیشل کمپلیکس کیلئے فنڈز مقرر کیا گیا تھا اس موقع پر ایڈیشنل ایڈوکیٹ جنرل نے عدالت کو بتایاکہ رائلٹی کی رقم سے بن رہا ہے، ایڈمنسٹریٹر اپروول بھی ضروری ہے جبکہ درخواست گذارنے بتایا کہ سال 2015 میں اے ڈی پی فنڈزز تھا اب رائلٹی کا کہا جارہا ہے اب یہ غلط بیانی کررہے ہیں جس پر چیف جسٹس پشاور ہائیکورٹ وقار احمد سیٹھ نے رٹ منظور کرتے ہوئے صوبائی حکومت کو جوڈیشل کمپلیکس کیلئے رقم جاری کرنے کے احکامات جار ی کردئیے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر