مطالبات کی منظوری کے لیے 31 مارچ تک انتظار کرینگے ورنہ۔۔۔پنجاب حکومت کے لئے نئی مشکل کھڑی ہو گئی

مطالبات کی منظوری کے لیے 31 مارچ تک انتظار کرینگے ورنہ۔۔۔پنجاب حکومت کے لئے ...
مطالبات کی منظوری کے لیے 31 مارچ تک انتظار کرینگے ورنہ۔۔۔پنجاب حکومت کے لئے نئی مشکل کھڑی ہو گئی

  



لاہور(ڈیلی پاکستان آن لائن)آل پاکستان کلرکس ایسوسی ایشن(ایپکا)نے حکومت پنجاب کو اپنے مطالبات پیش کرتے ہوئے کہا ہے کہ اگر 31مارچ تک منظوری نہ دی گئی تو احتجاج شروع کر دیا جائے گا۔

ایپکا کا اجلاس کمیٹی روم میٹرو پولیٹین کارپوریشن ٹاؤن ہال لاہورمیں مرکزی صدرحاجی محمدارشاد چوہدری کی زیر صدارت منعقدہوا۔اس موقع پرصوبائی صدروزیر نظامت، جنرل سیکرٹری میاں محمد اکرام الحق صوبہ بھر سے عہدیداران شریک ہوئے۔اجلاس میں کہا گیا کہ حکو مت سیکرٹریٹ الاؤنس،ایگزیٹو الاؤنس، یوٹیلیٹی الاؤنس، ہاؤس ریکوزیشن، گروپ انشورنس، زکوۃ،پی ایچ ای ڈی سمیت دیگر ملازمین کی ریگولرئزیشن کرے، بقیہ کیڈرز کی اَپ گریڈیشن کی جائے جبکہ بین وولنٹ فنڈ میں اضافی گرانٹ کےنوٹیفکیشن کو واپس لیا جائے۔اجلاس میں متفقہ طورپرفیصلہ کیاگیاکہ ہر ماہ کےپہلے اور آخری منگل کو صوبہ بھر میں کمشنرز و ڈپٹی کمشنرز آفسز کے باہر احتجاجی مظاہرے، ریلیاں و جلوس نکالے جائیں گے جبکہ لاہور میں مرکزی مظاہر ہ پنجاب لوکل گورنمنٹ کمپلیکس تا سول سیکرٹریٹ چوک تک احتجاجی ریلی نکالی جائے گی اور بھرپور احتجاج کیا جائے گا اور حکومت پنجاب کو مطالبات کی منظو ری کے لیے 31 مارچ2020 ء کی ڈیڈ لائن دی جاتی ہے۔ اگر مطالبات منظور نہ ہوئے تو 7اپریل2020 ء سے وزیر اعلیٰ ہاؤس کے باہر احتجاجی ڈے اینڈ نائٹ دھرنا ہو گاجس میں پنجاب بھر کے تمام ڈویژنل و ضلعی صدور کی قیادت میں ملازمین بھرپور شرکت کریں گے جو کہ مطالبات کی منظوری کے نوٹیفیکیشن تک جاری رہے گاجبکہ صوبہ بھرمیں ضلعی سطح پرمسلسل مکمل ہڑتال، تالہ بندی اور احتجاج ہوگا۔

مزید : علاقائی /پنجاب /لاہور